Global Editions

اس سال کاربن کے اخراجات میں کمی آئی ہے، لیکن یہ محض عارضی ہے

ٹم گو (Tim Gouw) بذریعہ ان سپلیش (Unsplash)
معیشت کے بحال ہوتے ہی ماحولیاتی آلودگی میں دوبارہ اضافہ شروع ہو جائے گا۔

ریسرچ گروپ بلوم برگ این ای ایف (Bloomberg NEF) کی ایک رپورٹ کے مطابق، اس سال امریکہ میں کاربن کے اخراجات میں نو فیصد کمی ہوئی، جو پچھلی تین دہائیوں کی سب سے زیادہ شرح ہے۔

تاہم اس کمی کی وجہ حکومتی پالیسیاں، اور صارفین اور کاروباروں کے اقدام نہيں بلکہ کرونا وائرس کے باعث نافذ کیے جانے والے لاک ڈاؤنز ہیں۔

بلوم برگ این ای ایف کے مطابق اگر covid-19 نہیں ہوتا تو 2020ء میں ماحولیاتی آلودگی کی شرح میں صرف ایک فیصد کمی ہوتی۔ اس کا مطلب ہے کہ وبا کے اختتام کے بعد جب معیشت بحال ہونا شروع ہوگی تو اخراجات میں تیزی سے اضافہ ہوگا۔

کاربن کے اخراجات میں کمی کی سب سے بڑی وجہ نقل و حمل کا شعبہ تھا۔ بلوم برگ این ای ایف کی رپورٹ کے مطابق، اس شعبے کے باعث پیدا ہونے والے کاربن اخراجات میں 14 فیصد کمی ہوئی۔ دوسرے نمبر پر بجلی کی صنعت (جو کاربن کے اخراجات میں 11 فیصد کمی کی وجہ بنی) اور تیسرے نمبر پر تخلیق کاری کا شعبہ (جو 7 فیصد کمی کی وجہ بنا) رہے۔

تاہم ان اعداد و شمار میں اس سال امریکہ میں وسیع پیمانے پر پھیلنے والی جنگلات کی آگ کو خاطر میں نہیں لایا گیا ہے۔ 2019ء میں لگنے والی آگ کے مقابلے میں اس سال 20 کروڑ میٹرک ٹن کاربن ڈائی آکسائيڈ زیادہ خارج ہوئی۔ بلوم برگ کے مطابق، 2020ء کی آگ کو شامل کرنے کے بعد امریکہ میں کاربن کے اخراجات میں محض 6.4 فیصد کی کمی ہوئی۔

بعض افراد کا کہنا ہے کہ یہ اعداد و شمار اس بات کی علامت ہیں کہ ہم ماحولیاتی تبدیلی میں کمی کے لیے اپنے طور طریقے تبدیل کرنے کی صلاحیت رکھتے ہيں۔ تاہم یہ بھی سچ ہے کہ اس کمی کی سب سے بڑی وجہ کام پر جانے، دوستوں اور گھر والوں سے ملنے، اور دوسرے ملکوں اور شہروں کے سفر پر لگائی جانے والی پابندیاں تھیں۔ ایسے بہت کم لوگ ہيں جو یہ شوق ہمیشہ کے لیے ترک کرنے پر آمادہ ہوں گے۔

اس کمی کے پیچھے لوگوں کی ملازمت اور آمدنی کے ذرائع سے محرومی، خوراک اور دیگر ضروریات پر خرچ کردہ رقم میں کمی، اور بیماری اور موت کا بھی بہت بڑا ہاتھ ہے۔ یہ ایسی صورتحال نہيں ہے جسے کوئی بھی معقول شخص طویل عرصے تک برقرار رکھنا چاہے گا۔

بحیثیت انسان، ہم نہيں چاہتے کہ ماحولیاتی تبدیلی کو کم کرنے کے چکر میں دوسروں کی زندگیاں اجیرن کردی جائیں۔ ہمیں توانائی اور غذا پیدا کرنے، اور نقل و حمل کے طریقوں کو تبدیل کرنے کے ضرورت ہے۔ اور بلوم برگ این ای اف کی رپورٹ سے یہ بات واضح ہے کہ ہم نے ان تبدیلیوں کے حوالے سے صرف پہلا قدم ہی اٹھایا ہے۔

تحریر: جیمز ٹیمپل (James Temple)

Read in English

Authors

*

Top