Global Editions

انجینئرڈ لکڑی روشنی کو منعکس کرکےعمارت کو ٹھنڈا رکھ سکتی ہے

انجینئرڈ لکڑی اے سی کا متبادل ہو سکتی ہے

یہ انجینئرڈ لکڑی کاربن کے اخراج کو کم کرکےائیر کنڈیشنر کی ضرورت کو کم کر سکتی ہے۔

اس کو کیسے بنایا گیا: یونیورسٹی آف میری لینڈ کی ایک ٹیم نے لکڑی سے لگنن مواد نکال دیا۔ لگنن مواد لکڑی کے ایک دوسرے سے جڑے اہم اجزا جیسا کہ سیلولوز کو گلو کی طرح اکٹھے جوڑ کر رکھتا ہے۔لیکن یہ بھی انفراریڈ روشنی کو جذب کرتا ہے جس کا مطلب یہ ہے کہ لکڑی کو سورج کی روشنی کی موجودگی میں گرم رکھتا ہے۔

محققین نے باقی ماندہ سیلولوز کو گرم کیااورسکیڑا جس سے ایک ایسی لکڑی وجود میں آئی جو قدرتی لکڑی کے مقابلے میں آٹھ گنا زیادہ مضبوط تھی۔
اس کی خصوصیات: یہ بنائی گئی لکڑی صرف مضبوط نہیں ہے۔ پیلے رنگ کی سیلولوز تقریباً تمام آنے والی روشنی کو منعکس کرتی ہے اور بہت کم انفراریڈ روشنی کوجذب کرتی ہے۔ یہ انفراریڈ روشنی کو بھی منعکس کرتی ہے۔ یہ اپنے اردگرد والی گرمی کو جذب کرنے کے قابل ہوتی ہے اور اسے واپس پھینکتی ہے۔ سائنس رسالے میں چھپنے والے ایک پیپر کے مطابق یہ اپنے سے منسلک سطح کودس سنٹی گریڈٹھنڈا کرتی ہےاورتوانائی کی لاگت میں بیس فیصد سے ساٹھ فیصد کمی لاتی ہے۔

ممکنہ اثرات: ایئر کنڈیشنر کا گلوبل وارمنگ میں ایک بڑا کردار ہے۔اے سی عمارتوں سے گرمی پمپ کرتا ہے اور اس سےاے سی کے استعمال کرنے کی ضرورت میں اضافہ ہوتا ہے۔ یہ انجنئیرڈلکڑی ہمارا اے سی پر انحصار کم کرتی ہے۔
کچھ احتیاطیں: یہ لکڑی گرمی کم کرنے کے مواد میں ایک مفید شراکت دارہے لیکن یہ عام لکڑی کے مقابلے میں زیادہ مہنگی ہو گی ۔ یہ شاذ و نادر چھتوں میں استعمال ہوتی ہے۔ دنیا بھر میں رہائشی اپارٹمنٹ بلاکس اکثر سستے کنکریٹ سے بنائے جاتے ہیں۔ اس طرح کی لکڑی باہر لگائی جائے گی لیکن یہ آگ پکڑتی ہے اور دوسرے مواد کے مقابلے میں کم پائیدار ہے۔

تحریر: کرلوٹیجی (Charlotte JeeI)

Read in English

Authors

*

Top