Global Editions

کینسر کے علاج میں پیش رفت

نام: ہمسا وینکاٹیش(Humsa Venkatesh)
عمر: 32سال
ادارہ: اسٹینفورڈ یونیورسٹی

انہوں نے کینسر کی بڑھوتری کے حوالے سے ایک رازدریافت کیا جس سے نئی ادویات بن سکتی ہے

ہمسا وینکاٹیش کی تحقیق سے پتا چلا کہ کینسر کس طرح سے نیوران کی سرگرمی کو جکڑ کر اپنے آپ کی بڑھوتری میں اضافہ کرتا ہے۔ ان کی دریافت نے ایک نئی تحقیق کا اضافہ کیا جس میں مختلف اقسام کے کینسر کی سرگرمیوں کا مطالعہ کیا گیا ہے۔ ان کا کہنا ہے، " نیوران کے نظام سگنل دیتے ہیں کہ کہ ٹیومر کس طرح بڑھے اور کام کرے"۔ ان کےنتائج ایسے تھراپیوں کی طرف لے جا سکتے ہیں جو مختلف ٹیومر کے خلیات کے خلاف کام کرتی ہیں۔

جب ہمسا وینکاٹیش کیلیفورنیا میں جوان ہو رہی تھیں توانہیں اس وقت پتا چلا کہ ان کا ہندوستان میں رہائش پذیرچاچا گردے کے کینسر میں مبتلا ہے۔ اگرچہ انہوں نے بھارت اور امریکہ دونوں میں علاج کروایا، ان کے لئے دستیاب واحد حل شعاعیں لگوانا اورکیمو تھراپی تھے اور یہ دونوں ہی مؤثر نہ تھے۔ وہ بیماری تشخیص ہونے کےدو سال بعد مر گیا۔اس تجربے سے ہمسا وینکاٹیش نے محسوس کیا کہ علاج کرنے والے ڈاکٹروں کوکینسر کی ٹیومر کی بنیادی میکانیزم بارے بہت تھوڑا پتا تھا۔

اس کےبعد انہوں نےایک ڈاکٹر بننے کے بجائے خود کو اس چیز کوپڑھنے کے لئے وقف کر دیا۔ ان کا کہنا ہے،"میں چاہتی ہوں کہ میرا حصہ صرف انفرادی سطح پر ان مریضوں کا علاج کرنے میں صرف نہ ہو بلکہ کینسر میں تحقیق کو بڑھایا جائے جو ہمیں اس کا مختلف طریقے سے علاج کرنے میں مدد دے۔"
اب ہمسا وینکاٹیش ٹیومر ز کے طفیلی رویہ کا ماحول میں مطالعہ کر رہی ہیں اور ان کے لئے علاج دریافت کر رہی ہیں۔یہ ادویات جلد ہی کلینکس پر آسکتی ہیں کیونکہ ان کے پروٹائپ پہلے سے ہی موجود ہیں۔ یہ پروٹائپس دوسرے مقاصد کے لئے بنائے گئے تھے اور سائنسدانوں کو ان میں کینسر کے علاج کے لئے پوٹینشل نظر آیا۔

تحریر: یٹنگ سن (Yiting Sun)

Read in English

Authors
Top