Global Editions

گھریلو ملازمین کی تصدیق کے لیےسافٹ و یئر

تصور کریں کہ آپ اپنے گھر کے لیے ایک باورچی کی خدمات حاصل کرنا چاہتے ہیں تو کیا آپ کے خیال میں آپ کے دوست کے ڈرائیور کی وساطت سے آنے والا باورچی قابل اعتبار ہو گا ؟ کیوں کہ اس نئے باورچی کے کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ (CNIC) کی ایک کاپی بھی آپ کے پاس موجود ہے ، اس باورچی کو سارا دن اپنے کام کے لیے گھر کے تمام حصوں حتیٰ کہ کمروں اور خاندان کے تمام اراکین تک با آسانی رسائی حاصل ہوتی ہے۔ اسی دوران میں ایک دوپہر جب آپ کے گھر میں کوئی نہیں ہے اور باورچی اپنے دو ساتھیوں کی مدد سے آپ کی الماریوں کو خالی کرکے فرار ہو جائے تو ایسی صورت حال میں آپ فوری طورپر گھبرا کر ولیس کو کال کریں گے ، پولیس آئے گی اور تحقیقات شروع کر دے گی۔ اس دوران میں یہ انکشاف ہو گا کہ وہ باورچی عادی مجرم ہے اور وہ اس سے پہلے بھی کئی گھروں میں یہ وارداتیں کر چکا ہے اور اس کا نام پہلے ہی پولیس کی مطلوب افراد کی فہرست میں شامل ہے۔وہ مفرور ہے اور کہیں نہیں مل رہا، اس صورت حال میں اگر آپ ایک ملازم کی خدمات حاصل کرنے سے پہلے مقامی پولیس اسٹیشن سے اس ملازم کے بارے میں معلومات حاصل کر لیتے تو آپ نقصان سے محفوظ رہ سکتے تھے کیوں کہ لاہور پولیس نے اکتوبر 2016ء سے روپ(Registration of Private Employees) نامی سافٹ وئیر شہر کے تمام تھانوں میں نصب کیا ہے، جس کے تحت اب کوئی بھی شخص گھریلو ملازم رکھنے سے پہلے روپ سافٹ ویئر کے ذریعے ملازم کے بارے میں تمام معلومات تک رسائی حاصل کر سکتاہے، آپ ملازم کے کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ نمبر درج کر کے پولیس کےذریعے معلومات حاصل کر سکتے ہیں .پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ (پی آئی ٹی بی) کی مدد سے تیار کیا جانے والا یہ سافٹ ویئر کریمنل ریکارڈ آ فس کے ڈیٹا بیس سے منسلک ہے اور یہ سافٹ ویئر لاہور کے تمام پولیس اسٹیشنز کے فرنٹ ڈیسک پر دستیاب ہے اور ہر کوئی اس سے مستفید ہو سکتا ہے۔ لاہور کی رہائشی ایک خاتون سارہ خا ن کا کہنا ہے کہ یہ ایک عمدہ سہولت ہے جس کے تحت کوئی بھی شخص گھر میں ملازم رکھنے سے پہلے اس کے بارے میں تمام معلومات حاصل کر سکتا ہے۔ واضح رہے کہ گزشتہ پانچ سے دس سالوں کے دوران چوری، ڈکیتیوں اور یہاں تک کہ قتل کی ایسی وارداتیں ہوئی ہیں جن میں گھریلو ملازم ملوث تھے، لہذا اس سافٹ ویئر کا استعمال کر کے ملازم کاتفصیلی پس منظر چیک کیا جا سکتا ہےاور گھر کی سکیورٹی کو محفوظ بنایا جاسکتا ہے۔

تحریر: نشمیا سکھیرا  (Nushmiya Sukhera)

Read in English

Authors
Top