Global Editions

نیوز بلیٹن

میگزین

تازہ ترین

ا یجادات کا مرکز سلیکون ویلی

’’یوں لگتا ہے جیسے انجینئرنگ سے متعلق انسانی ذہانت اور سرمایہ موبائل فون کی ایپلی کیشنز کے گرد گھوم رہی ہے۔ لیکن اگر اسی طرح کی نئی کمپنیاں وجود میں آتی ہیں تو سوچنا ہو گا کہ کیا ہم ترقی کی شاہراہ پر آگے بڑھ رہے ہیں؟ ‘‘ دفتر میں سیاہ اور روزووڈ فرنیچر سے …مزید پڑ ھیں

گوگل کی نئی کمپنی الفابیٹ

جو لوگ انٹرنیٹ استعمال کرتے ہیں ان کیلئے گوگل نئی چیز نہیں ہے۔ ’’ گوگل ‘‘ سرچ انجنز میں سب سے زیادہ قابل اعتماد اور تیز رفتار سمجھا جاتا ہے۔ بین الاقوامی سطح پر گوگل محض اپنے سرچ انجن ہی کے سبب نہیں پہچانا جاتا بلکہ اس کی دیگر پراڈکٹس بھی ہیں۔ گوگل کے سرچ …مزید پڑ ھیں

سفری مسائل کا آسان حل

ہمارے ہاں ترقی پذیر ممالک میں صرف ٹریفک کا بے پناہ اژدھام ہی مسئلہ نہیں جس کو حل کرنے کیلئے سڑکوں کا جال بھی ناکافی محسوس ہوتاہے بلکہ بیشمار ایسے لوگ ہیں جو اندرون شہر یا پھر ایک سے دوسرے شہر جانے کیلئے سواری کے تھکا دینے والے انتظار سے گزرتے ہیں۔ پھر کچھ لوگ …مزید پڑ ھیں

بچوں کے رونے کی آواز سے بے نیاز موسیقی سنیں

امریکی کمپنیوں ڈاپلر لیبزاور نوہیرانے مشترکہ کاوشوں سے سماعت کے ایسے آلات تیار کئے ہیں جسے استعمال کرکے ناپسندیدہ آوازوں کو کم کیا جا سکے گا جبکہ آپ اپنی پسندیدہ آواز کو مطلوبہ والیوم میں سن سکیں گے۔ نوح کرافٹ کی کمپنی ڈاپلر لیب سان فرانسسکوکا کہنا ہے کہ ایسے سماعت کے آلات پر کام …مزید پڑ ھیں

سوشل میڈیا ، داعش کا اہم ہتھیار

موجودہ دور میں جس طر ح دوسرے شعبوں میں ترقی ہوئی ہے اسی طرح دور جدید کی جنگوں میں بھی جدت آئی ہے آج کل دنیا کو دہشت گردی کا سامنا ہے اور دہشت گردوں نے بھی جنگ لڑنے کے لئے روائتی ہتھیاروں کے ساتھ ساتھ جدید ٹیکنالوجی کا استعمال شروع کر دیا ہے جس …مزید پڑ ھیں

بھارت کا توانائی بحران

بھارت دنیا میں تیسرا بڑا ملک ہے جو فضا میں زہر آلود گیسیں خارج کرتا ہے۔ گیسوں کے اخراج کی اس شرح کو کم کرنے کیلئے بھارت کچھ ایسا کرنے کی کوشش کررہا ہے جو کوئی اور ملکنہیں کر رہا۔ بھارت کی کوشش ہے کہ فضا میں مزید زہر آلود گیسوں میں اضافے کئے بغیر …مزید پڑ ھیں

روبوٹس انسانوں پر غالب آجائیں گے ؟

امریکہ کی کارنیل یونیورسٹی کے پروفیسر ہڈلپسن ( Hod Lipson) مصنوعی ذہانت اور رو بوٹ سازی پر تحقیق میں عالمی شہرت کے حامل ہیں وہ ایسی خودکار مشینوں پرکام کررہے ہیں جو صنعتوں میں مزدوروں کی جگہ لے سکیں لیکن پروفیسر لپسن کو ڈر ہے کہ ڈیجیٹل ٹیکنالوجی اور خود کار مشینوں میں تیزی سے …مزید پڑ ھیں

انسانوں میں سوروں کے اعضاء لگانے کے تجربات کامیاب

میں شیردل انسانوں کی بات اب پرانی ہو گئی، نئی بات سور دل انسانوں کی ہے جو زیادہ دور کی بات نہیں رہی۔ آپ حیران ہو رہے ہوں گے کہ یہ کیسی بات کی جارہی ہے لیکن یہ حقیقت ہے کہ جدید سائنس طبی لحاظ سے بہت جلد ایسا ممکن بنادے گی،یعنی اب جینیاتی سور …مزید پڑ ھیں

اب سالٹ ری ایکٹرز نیوکلئیر ری ایکٹرز کی جگہ لیں گے

بہت سے لوگ ایٹمی توانائی پر بھی ماحولیاتی آلودگی پھیلانے کے حوالے سے اسی طرح اعتراض کرتے ہیں جس طرح انہیں کوئلے اور گیس سے توانائی حاصل کرنے پر اعتراض ہے لیکن اب سائنسدانوں نے ان کے اس اعتراض کا بھی حل ڈھونڈ لیا ہے اب مولٹن سالٹ ری ایکٹر (Molten Salt Reactor) پر تحقیق …مزید پڑ ھیں

جینیاتی سویابین سے پیداوار میں اضافہ

جینیاتی تبدیل شدہ سویا بین کی مجموعی پیداوار1996 ء تک 58.6 فیصد سے زیادہ ہوچکی تھی اور اب اس کا تخمینہ اس سے بھی بہت آگے بڑھ چکا ہے۔سویا بین کے بیج کے جینزمیں جینیٹک انجینئرنگ کے ذریعے تبدیلی کی جاتی ہے ،جس سے مزید صحتمند اجزاء اس میں شامل ہوجاتے ہیں اور پھر انہیں …مزید پڑ ھیں

جیوانجنیئرنگ کے بنیادی اصول

ہمیں جیوانجنیئرنگ پر غور کرنے کی ضرورت ہے۔ اور یہی سب سے بڑا مسئلہ ہے۔ 2015ء کا پیرس کا معاہدہ ایک بہت بڑی کامیابی تھی، لیکن حقیقت یہ ہے کہ صنعتی انقلاب کے پہلے کے درجہ حرارت حاصل کرنے کے لیے ابھی بھی بہت محنت کرنے کی ضرورت ہے۔ اس وجہ سے جیوانجنیئرنگ، خاص طور …مزید پڑ ھیں

گرمائش سے فائدہ اٹھانے والے شمسی سیلز

آج کل بڑھتی ہوئی تعداد میں گھروں کی چھتوں پر شمسی توانائی کے پینلز نظر آرہے ہیں، لیکن ابھی بھی یہ ڈیوائسز بے ہنگم، مہنگے اور غیرموثر ثابت ہورہی ہیں۔ فوٹو وولٹیک سیلز کی محدود صلاحیتوں کی وجہ سے سورج کی توانائی کا صرف کچھ ہی حصہ استعمال ہو پاتا ہے۔ لیکن اب ایم آئی …مزید پڑ ھیں

مسٹر روبوٹ شو ہیکرز کی درست نمائندگی کرتا ہے

ہیکرز کون ہیں؟ کیا کرسکتے ہیں اور کس طرح کام کرتے ہیں؟ وہ اپنی سرگرمیوں کو دوسروں کی نظروں سے کیسے پوشیدہ رکھتے ہیں؟ یہ وہ سوالات ہیں جو عام لوگوں کے ذہن میں گونجتے ہیں کیوں کہ ہمارے معاشرے میں کمپیوٹرز کی اس طرح تصویر کشی کی گئی ہے کہ یہ ایسا جادو کا …مزید پڑ ھیں

شہری انتظام کیلئے جدید مگر سستی ٹیکنالوجی کی ضرورت

پوری دنیا میں پھیلے ہوئے شہر، خواہ وہ امیر ہوں یا غریب، جدیدٹیکنالوجی کو پوری طرح سے اختیار کرنے کی کوششوں میں مصروف ہیں۔ ان شہروں میں بڑھتے ہوئے چیلنجز کا مقابلہ کرنے کیلئے موبائل ایپلی کیشنز، سینسرز اور دیگر ٹیکنالوجیز میدان میں آگئی ہیں ۔

Top