Global Editions

!ڈرون ریسنگ لیگ بھی شروع۔۔۔۔

اب آپ فٹ بال کو بھول جائیں کیونکہ بہت جلد ایک نیا کھیل متعارف ہونے جا رہا ہے اور وہ ہے ڈرون ریسنگ۔ ہوا میں برتری کا مظاہرہ اگرچہ کوئی نئی بات نہیں۔ دنیا کے کئی ممالک میں ایسے کئی کھیل موجود ہیں جن میں چھوٹے ہوائی جہاز مختلف کرتب دکھاتے ہیں اور شائقین کو محظوظ کرتے ہیں تاہم ڈرون ریسنگ ایک ایسا اچھوتا خیال ہے جس کی پزیرائی یقینی ہے۔ ڈرون کا ذکر آتے ہی یہ خیال ذہن میں ابھرتا ہے کہ فضاؤں میں اڑنے والے ڈرون یا تو کسی دورافتادہ علاقے میں میزائل برسانے جا رہے ہیں یا کسی مقام کی خفیہ فلم بندی کرنے کی منصوبہ بندی ہے، کسی بھی شخص کے ذہن کے کسی گوشے میں یہ تاثر نہیں ابھرتا کہ ڈورن کی قوت پرواز کا مقابلہ بھی کیا جا سکتا ہے اب اگرچہ کئی ممالک میں ڈرونز کو مختلف شعبوں میں استعمال کرنے کی اجازت حاصل ہو چکی ہے اور ڈرونز کے بارے میں پھیلنے والا پہلا منفی تاثر کافی حد تک کم ہو چکا ہے تاہم اس کے باوجود ڈرون کے استعمال کے لئے یہ ایک نئی جہت ہے۔ اب ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ چند دوست ویک اینڈ پر کسی تفریحی مقام کی سیر کے لئے جائیں اور وہاں آپس میں ڈرونز اڑا کر مقابلہ کریں کہ فضا کو کون تسخیر کرتا ہے۔ کمرشل سطح پر بھی ڈرون کی پرواز کا ایک مقابلہ منعقد ہو چکا ہے۔ یہ مقابلہ متحدہ عرب امارت میں منعقد ہوا اور یہ مقابلہ برطانیہ سے تعلق رکھنے والے ایک پندرہ سالہ نوجوان پائلٹ نے جیت لیا اور اس نے اڑھائی لاکھ ڈالرز کا خطیر انعام حاصل کیا۔ اب ایک برطانوی نشریاتی ادارہ سکائی ڈرون ریسنگ لیگ کے نشریاتی حقوق حاصل کرنے کے لئے دس لاکھ ڈالرز کی خطیر رقم کی سرمایہ کاری کی ہے۔ سکائی چینل کو صرف برطانیہ کے لئے اس لیگ کے نشریاتی حقوق حاصل ہونگے جبکہ جن دیگر چینلز نے مختلف ممالک کے لئے نشریاتی حقوق حاصل کئے ہیں ان میں ای ایس پی این اور سیون سپورٹس شامل ہیں۔ ڈرونز کی پرواز کے یہ مقابلے ہر سال امریکہ میں منعقد ہونگے۔ ایک مقابلہ لندن میں بھی منعقد کیا جائیگا۔ اب یہ کہنا درست ہو گا کہ مستقبل میں ڈرونز کی پرواز کے مقابلے فارمولہ ون کے متبادل کے طور پر مقبولیت حاصل کر سکتے ہیں۔ ڈرون ریسنگ ایونٹ میں وہ تمام عوامل موجود ہیں جو کسی بھی کھیل کو مقبول عام کرنے کے لئے درکار ہوتے ہیں۔ اس کھیل میں چیلنج بھی ہے اور خطیر انعامی رقوم بھی ہیں اور یوں لگتا ہے کہ آنیوالے چند مہینوں میں کھیلوں کی دنیا میں انقلاب آ جائیگا۔

تحریر: جیمی کونڈیلفی (Jamie Condliffe)

Read in English

Authors

*

Top