Global Editions

اب کم قیمت اور ماحول دوست ایل ای ڈی تیار کیے جارہے ہيں

تحریر: ڈاوے ڈی (Dawei Di)
عمر: 34 سال
ادارہ: شیجیانگ یونیورسٹی اور یونیورسٹی آف کیمبرج
جائے پیدائش: چین

سمارٹ فونز اور ٹی وی سکرینز سے لے کر ٹریفک لائٹس تک کئی اقسام کی مصنوعات میں ایل ای ڈیز (LEDs) کا استعمال کیا جاتا ہے لیکن ان کی تخلیق بہت مہنگی ثابت ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ، اب تک بجلی کی روشنی میں موثر تبدیلی اور روشنی کی تیزی کے درمیان بہترین توازن کا تعین نہیں ہوسکا ہے۔

ڈاوے ڈی اب ایسے نئی ایل ای ڈیز اور آلے تیار کیے ہیں جو تیز روشنی پیدا کرتے ہوئے بھی زیادہ سے زیادہ اثر اندازی کے ساتھ روشنی کو بجلی میں تبدیل کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ اس کے علاوہ، انہیں کم قیمت، کم پیچیدہ، اور کم توانائی استعمال کرنے والے پراسیسز کے ذریعے تخلیق کیا جاسکتا ہے۔

عام طور پر ایل ای ڈی کی تخلیق کاری میں اعلیٰ درجہ حرارت استعمال کرنے والے طریقہ کار کو بروئے کار لایا جاتا ہے یا ویکوم میں ٹھوس سطح پر روشنی خارج کرنے والے مواد رکھنے کی ضرورت پیش آتی ہے۔ ڈی کے مواد عام طور پر دستیاب مواد کی مدد سے تیار کیے جانے کی وجہ سے کم قیمت ثابت ہوتے ہیں اور انہيں اعلیٰ درجہ حرارت پر یا ویکوم میں رکھنے کی ضرورت پیش نہيں آتی۔ اس کے بجائے انہيں ایک سیال میں گھول کر ٹھوس سطح پر لگایا جاتا ہے۔

اس وقت کئی کمپنیاں ڈی کی تخلیق کاری کے طریقوں کی ٹیسٹنگ کررہی ہيں۔ ڈی اعتراف کرتے ہيں کہ پرانے طریقے تبدیل کرنے میں وقت لگے گا لیکن وہ توقع کرتے ہيں کہ ایسا جلد ہی ہوجائے۔

ڈی شیجیانگ یونیورسٹی میں پڑھاتے ہيں اور یونیورسٹی آف کیمبرج میں پارٹ ٹائم ریسرچر ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ تخلیق کاری کے طریقے جلد ہی تبدیل ہوں گے۔

تحریر: یٹنگ سن (Yiting Sun)

Read in English

Authors
Top