Global Editions

چہرے کی شناخت کی ٹیکنالوجی سے کاروباری دنیا میں انقلاب

سات سال پہلے ین قی (Yin Qi) اور ان کے دوستوں نے بیجنگ میں میگ وی (Megvii) نامی ایک کمپنی قائم کی۔ آج اس کمپنی میں ڈیڑھ ہزار سے زائد ملازمین کام کررہے ہيں اور اس کا چہرے کی شناخت کا پلیٹ فارم، جس کا نام فیس پلس پلس (++Face) ہے، 220 سے زیادہ ممالک اور علاقہ جات میں استعمال کیا جارہا ہے۔

فیس پلس پلس نے چین کے کاروباری منظرنامے کو بدل کر رکھ دیا ہے۔ آج یہ ٹیکنالوجی سب وے اور ٹرین کے سٹیشنز میں سکریننگ سے لے کر بینکنگ ایپس میں صارفین کی شناخت کی تصدیق تک ہر قسم کے کام کے لیے استعمال کی جارہی ہے۔

میگ وی کو چین میں قائم ہونے کی وجہ سے بہت فائدہ ہوا ہے۔ مغربی ممالک میں چہرے کی شناخت کی ٹیکنالوجی کا استعمال صرف سمارٹ فونز ان لاک کرنے تک محدود ہے۔ لیکن چین میں اس ٹیکنالوجی کو شروع ہی سے حکومت اور بڑی کمپنیوں کا تعاون حاصل رہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ میگ وی اپنے الگارتھمز کو پبلک سیکورٹی، ریئل ایسٹیٹ، فنانس اور ری ٹیل جیسی مختلف صنعتوں کو فروخت کرنے میں کامیاب ہوسکی ہے۔

ین اعتراف کرتے ہيں کہ پرائیویسی ایک بہت بڑا مسئلہ ہے۔ وہ کہتے ہيں کہ ان کی مصنوعات خام ڈیٹا کو کلاؤڈ پر اپ لوڈ کرنے کے بجائے مقامی ڈیوائسز پر پراسیس کرتے ہيں۔ اس کے علاوہ، وہ چاہتے ہيں کہ جلد ہی صارف کی پرائیویسی کے متعلق معیارات تیار ہوجائيں۔ وہ کہتے ہیں "اگر ان ٹیکنالوجیز کو چلانے اور ان کے انتظام کے لیے سسٹم بہتر ہوجائے تو ان کے فوائد ان کے نقصانات سے کہیں زيادہ ہوں گے۔"

تحریر: یٹنگ سن (Yiting Sun)

Read in English

Authors
Top