Global Editions

ٹیکنالوجی کے ذریعےانسانی دماغ کو مشین ریڈایبل بنانے کی کوشش

ایڈم ماربل سٹون
عمر: 31
ادارہ: کر ینل سٹارٹ اپ

انہوں نےایک کتاب لکھی کہ دماغ میں ہر نیوران کو کیسے ریکارڈ کیا جائے

ایڈم ماربل سٹون دماغ کو مشین ریڈایبل بنانا چاہتے ہیں۔ لہٰذا انہوں نے جسمانی حدود پر کام کیا کہ یہ جان سکیں کہ دماغ کی سرگرمیوں کو ریکارڈ کرنا کتنا ممکن ہے اور اب وہ اس علم کا استعمال کرتے ہوئے کرینل میں ٹیکنالوجی کی حکمت عملی سیٹ کررہے ہیں۔ کرینل 100 ملین ڈالر کی فنڈنگ سے شروع کیا گیاسٹارٹ اپ ہے جوانسانوں کے لئے نیورل انٹرفیس بنا رہا ہے۔

پی ایچ ڈی کے طالب علم کے طور پر ماربل سٹون ایک اہم ریسرچ پیپر کا مصنف تھا جو کہ اب محققین کے لئےٹیکنالوجی کےذریعے دماغ کی سرگرمیوں کو پڑھنے میں ایک اہم سٹریٹیجک دستاویز سمجھا جاتا ہے۔ انہوں نے چوہے کے دماغ کو ماڈل کے طور پر استعمال کرتے ہوئے انجینئرنگ کے مسائل کی نشاندہی کی ہے جو ہمیں دماغ میں ہر نیوران کی سرگرمی کے ساتھ ساتھ حل کرنا ہوگی۔

ان کا کہنا ہے،"یہ سب کچھ ہے کہ ہم کس طرح اور کس نقطہ نظر سے دماغ کا مطالعہ کرنا چاہتے ہیں، کسی طرح سے خود دماغ کی پیچیدگی سے نمٹنے کی کوشش کرتے ہیں؟"

کرینل میں چیف سٹریٹجی آفیسر کے طور پر وہ نیورل انٹرفیس میں بہترین اپروچز کو سمجھانے کے لیے معروف محققین کے ایک نیٹ ورک کی تربیت کر رہا ہےتاکہ وہ دماغی امراض کو سمجھنے اور ان کا علاج کرنے میں مدد کر سکیں۔ یہ سائنسدان ایک دن دماغوں کا مشینوں میں ضم ہونابھی ممکن بنا سکتے ہیں۔

تحریر: ایڈ گینٹ (Edd Gent)

Read in English

Authors
Top