Global Editions

اس خودکار گاڑی میں کوئی سٹیئرنگ وہیل نہيں ہے

جینرل موٹرز نے ایک ایسی خودکار گاڑی کا اعلان کیا ہے جس میں کوئی سٹیئرنگ وہیل موجود نہيں ہوگا، لیکن اس گاڑی کی دستیابی میں ابھی بہت وقت ہے۔

خبر: جینرل موٹرز کے خودکار گاڑی بنانے والے محکمے کروز (Cruise) نے آریجن (Origin) نامی برقی گاڑی  متعارف کی ہے جس میں انسانی ڈرائیور کی قطعی ضرورت نہيں ہے۔ یہ گاڑی نجی استعمال کے لیے بنائی گئی ہے، بلکہ کروز چاہتے ہيں کہ ایک دن صارفین بالکل اوبر کی طرح اپنے سمارٹ فونز کی مدد سے آریجن منگواسکیں۔

اس گاڑی کے متعلق تفصیلات: اس گاڑی میں نہ تو کوئی سٹیئرنگ وہیل ہے اور نہ ہی گیئر کا شیفٹ یا پیڈل۔ اس میں چھ مسافرین آمنے سامنے بیٹھ سکتے ہيں۔ گاڑی کے دروازے کھولنے کے لیے ایک کوڈ کا استعمال کیا جاتا ہے۔

یہ سب تو صحیح ہے، لیکن یہ گاڑی مارکیٹ میں کب دستیاب ہوگی؟ اس میں ابھی بہت وقت لگے گا۔ کروز کے مطابق آریجن کی سان فرانسسکو شہر میں ”جلد ہی“ ٹیسٹنگ شروع ہوجائے گی، لیکن اسے ابھی ضابطہ کار حکام کی منظوری حاصل نہيں ہوئی ہے۔ 2018ء میں کمپنی نے گاڑی کی ٹیسٹنگ کو ضروری قرار دینے والے وفاقی موٹر گاڑی کے حفاظتی معیارات سے استثنی کی درخواست دی تھی، لیکن اسے اب تک یہ استثنی حاصل نہيں ہوسکی ہے۔ اس کے علاوہ، آریجن کو اب تک ریاستی منظوری بھی نہيں مل سکی ہے۔ کروز نے یہ تخلیق ہونے والی گاڑیوں کی تعداد اور ان کی ٹیسٹنگ کے متعلق معلومات ابھی جاری نہيں کی ہے۔

اس کے علاوہ، ٹیک سے وابستہ مشکلات بھی موجود ہيں۔ خودکار گاڑیوں کے متعلق توقعات میں کمی آچکی ہے اور کروز کو یہ ثابت کرنا ہوگا کہ آریجن میں نصب سافٹ ویئر اور سینسرز کسی شہر کی مصروف شاہراؤں میں بحفاظت گاڑی چلانے کے لیے موزوں ہیں۔ نیز، آریجن کو وے مو (Waymo) اور فورڈ جیسی کمپنیوں کی جانب سے سخت مقابلے کا سامنا بھی ہوگا۔ اس وقت وے مو (Waymo) کی مکمل طور پر ڈرائیور کے بغیر چلنے والی وینز کی ایریزونا کے شہر فینکس میں ٹیسٹنگ جاری ہے، اور فورڈ نے اگلے سال ٹیکسس کے شہر آسٹن میں خودکار ٹیکسی کی سہولت متعارف کرنے کا اعلان کیا ہے۔

تحریر: شارلٹ جی (Charlotte Jee)

تصویر: کروز (Cruise)

Read in English

Authors

*

Top