Global Editions

فیس بک نےچین میں قدم جمانےکیلئےنیا سینسر شپ ٹول تیارکر لیا

سماجی رابطے کی معروف ویب سائٹ فیس بک نے چین میں قدم جمانے اور وہاں پر عوامی پزیرائی حاصل کرنے کے لئے نیا سینسر ٹول تیار کر لیا ہے۔ فیس بک کی جانب سے اٹھایا جانیوالا حالیہ اقدام اس ردعمل کے جواب میں بھی سمجھا جا رہا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ فیس بک پر جعلی خبریں پوسٹ کی گئی ہیں۔ ماضی میں کئی انٹرنیٹ کمپنیاں چین میں کام کرنے کے لئے چین کے سینسرشپ نظام کو کریک کرنے کی کوششیں کر چکی ہیں تاہم اس میدان میں مارک زیکر برگ کا عزم یہ ظاہر کرتا ہے کہ جہاں سب ناکام رہے ہیں وہاں وہ کامیابی حاصل کرنا چاہتے ہیں۔ اب نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق سماجی رابطے کی سب سے مقبول ویب سائٹ فیس بک نے ایک ایسا ٹول تیار کر لیا ہے جس کی مدد سے جعلی نیوز فیڈ اور مواد کو روکا جا سکے گا۔ اس حوالے سے ذرائع نے اخبار کو بتایا ہے کہ فیس بک کی جانب سے تیار کیا جانیوالا یہ سافٹ وئیر فیس بک کو چین میں کام کرنے کے لئے کارآمد ثابت ہو گا۔ نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق یہ سافٹ وئیر فیس بک سے جعلی مواد نیوز فیڈ میں داخل ہونے سے روکنے کے لئے ازخود استعمال نہیں کریگا جبکہ اس کام کے لئے کسی تیسرے فریق کی مدد لی جائیگی۔ یہ تیسرا فریق سماجی رابطے کی سائٹ پر پوسٹ کئے جانیوالے مواد کا جائزہ لے گا اور صرف اسی مواد کو شائع کیا جائیگا جو درست ہوگا۔ ناقدین اس معاملے کو صرف اسی تناظر میں نہیں دیکھ رہے بلکہ انہیں امریکہ میں صدارتی انتخابات کے دوران جعلی خبروں کی اشاعت کے ضمن میں ایک کڑی بھی قرار دے رہے ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ اگر فیس بک چین میں مواد کو سینسر کر رہی ہے تو اس نے امریکہ میں ایسا کام کیوں نہیں کیا؟ اس حوالے سے فیکٹ چیک ڈاٹ او آر جی کے ڈائریکٹر Eugene Keily کا کہنا ہے کہ برُی اطلاعات ضروری نہیں کہ غلط بھی ہوں اور یہ بالکل ویسا بھی نہیں ہے جیسا کہ آپ سوچ رہے ہیں ۔مارک زیکربرگ اس معاملے سے پوری طرح آگاہ ہیں اور انہوں نے کھلے عام یہ کہا ہے کہ وہ چاہتے ہیں کہ ان کا نیٹ ورک اور اس میں کام کرنے والے تمام افراد سچ کی ترجمانی کے لئے کام کریں۔ ان کا کہنا تھا کہ فیس بک کی جانب سے اٹھایا جانیوالا حالیہ اقدام جعلی خبروں کے مسئلے کا حل بھی ہے۔ زیکربرگ کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس ضمن میں مزید اقدامات بھی اٹھائے جائیں گے تاہم اس کے لئے جلدبازی کا مظاہرہ نہیں کیا جائیگا۔ اگر دیکھا جائے تو فیس بک کا چین کے لئے تیار کیا جانیوالا سینسر شپ ٹول صرف ذمہ داری کسی دوسرے پر ڈالنے کے لئے ہے کیونکہ فیس بک اس سینسرشپ کےلئے تیسرے فریق سے مدد لے رہی ہے اور وہ خود اس سینسرشپ کی ذمہ داری نہیں لینا چاہتی۔ شائد مارک زیکربرگ کے لئے خود کو سمجھانے کے لئے یہ اقدام کافی ہے کہ وہ کچھ غیر اخلاقی نہیں کر رہے۔

تحریر: جیمی کونڈیلفی (Jamie Condliffe)

Read in English

Authors
Top