Global Editions

ایتھریم فائونڈیشن تبدیلی کے لئے 30 ملین ڈالر لگا رہی ہے

ایتھریم کا شاید ایک مرکز نہیں ہے لیکن اس میں کچھ ایسا ہوتا ہے جو دل کی دھڑکن کے ساتھ مشابہت رکھتا ہے۔ سوئٹزرلینڈ میں واقع ایتھریم فاؤنڈیشن نہ صرف محققین اور ڈویلپرز کو "عالمی کمپیوٹر" بنانے کے مقصد کے لئے اہم کردار ادا کر رہی ہے بلکہ کمیونٹی کے لئے اخلاقی اور مالی تعاون بھی دے رہی ہے۔اس سب کے بعد دنیا میں تبدیلی لانا مہنگا ہو گا اور اس کی حوصلہ شکنی ہو گی۔

ایک نئے بلاگ پوسٹ میں فائونڈیشن نے روشنی ڈالی ہے کہ وہ کس طرح اگلے 12 مہینے میں ایتھریم منصوبوں میں 30 ملین ڈالرز کو لگانا چاہتی ہے۔ یہ رقم فائونڈیشن نے اپنے پاس رکھے جانے والے ایتھر سے نکالی ہے جو کہ اس کا کہنا ہے کہ اس کے تمام گردشی سکوں کے تقریباً زیروپوائنٹ سکس یا تقریباً155ملین ڈالرز کے برابر ہیں۔

پہلی ترجیح ای ٹی ایچ (ETH 2.0) ہے جو کہ ایک طویل عرصے سے ایک ایسا سافٹ وئیر اپ گریڈ ہے جس میں کام سوئچ کے ثبوت میں شامل ہو جائے گا۔ اس چیز سے نیٹ ورک میں ایک ایسی تبدیلی ہو جائے گی جو کہ بلاک چین میں معلومات کے ساتھ معاہدہ کرتی ہے۔

"مائنرز" کو کمپیوٹنگ وسائل میں خرچ کرنے کی بجائے، نیا نظام نئی ٹرانزیکشن کی توثیق کرنے کے لئے "سٹیکرز" پر بھروسہ کرے گے۔ یہ سسٹم خود میں بڑی رقم کو لاک کر کےقابل اعتماد کہلائے گا(جن کو سٹیکنگ کہا جاتا ہے)۔ کئی اکٹھی دوسری تبدیلیاں ایتھریم کو ایک ایسی کارکردگی اور سکیل پر چلانے کی اجازت دیتی ہیں جو آخر میں حقیقی وعدے کو پورا کرنے میں مدد دیتی ہے۔ ( اس کےخالق ویٹالک نے مذاق کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت ایتھریم 1999 کا سمارٹ فون ہے جو کہ سانپ والی گیم چلاسکتا ہے۔

فائونڈیشن ایتھرئم کے مستقبل کو بنا نے کے منصوبوں کے لئے 19ملین ڈالر گرانٹس کی صورت میں فراہم کرے گا۔ اس میں ای ٹی ایچ ٹو زیروETH 2.0 )) سافٹ وئیر کلائنٹس شامل ہیں۔ اس کے علاوہ نیو لئیر سسٹمز بھی شامل ہیں جو تیز ٹرانزیکشن کی اجازت دیتے ہیں اور اس چیز کی ضرورت ختم کر دیتے ہیں کہ آپ ہر دفعہ بلاک مین بلاک چین پر ریکارڈ ہوں ۔ مستقبل کی پرائیویسی ٹیکنالوجیز جو زیرو نالج پروف کا استعمال کرتی ہیں ۔ اس سے صارفین اپنے بارے میں شناختی معلومات کی تصدیق کر سکتے ہیں اور ان کو اپنی اصل معلومات فراہم کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔

اگر ہم مزید گہرائی سے دیکھیں تو ہمیں پتا چلتا ہے کہ ایتھریم فائونڈیشن ایک ایسے نقطے پر کام کر رہی ہے جوڈی سنٹرلائزیشن پر کام کر رہی ہے۔ اس گروپ کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر آیا میاگچی نے اس مہینے کے شروع میں ایم آئی ٹی ٹیکنالوجی ریویو کے بزنس آف بلاک چین ایونٹ میں خطاب کیا۔ جب فاؤنڈیشن شروع ہوئی تو کمیونٹی اتنی چھوٹی تھا کہ فائونڈیشن لازمی طور پر ایک ایتھریم تھی۔ پانچ سال بعد، بہت سی آزاد ٹیمیں نظام کے بنیادی ڈھانچے کو بہتر بنانے کے لئے کام کر رہی ہیں۔ میراگچی نے کہا: اس کا مطلب یہ ہے کہ اس کے گروپ کے کردار کو تبدیل ہونا ضروری ہے: " اس ڈی سنٹرلائزڈ ایکوسسٹم کے پوٹینشل کو بڑھانے کے لئے ہمیں اپنی طاقت کو ممکنہ حد تک کم کرنے کے لئے نئے راستے تلاش کرنےکی ضرورت ہے۔"

مثال کے طور پر، یہ زیادہ آزاد فنڈ کے اقدامات کی حوصلہ افزائی کر رہا ہے جیسے مولوچ ڈی اے او جو کہ ایتھریم انفراسٹرکچر پراجیکٹس کے منصوبوں کے لئے کرائوڈ سورسنگ کر رہا ہے۔ میراگچی کا کہنا ہے کہ اگر کمیونٹی اس پر بھروسہ کرتی ہے تو نہ صرف زیادہ پائیدار ہے ۔یہ زیادہ ڈی سنٹرلائزڈ ہے۔
لیکن ای ٹو ایچ ٹو پوائنٹ زیرو ایک بڑے پیمانے پر اور پیچیدہ کام ہو گا اور کامیابی یقیناً دور ہے۔ جیسا کہ بیٹرن نے ایک ٹویٹ میں دعویٰ کیا ہے کہ یہ سچ ہے اگر اس ہفتے کے تمام ضروری تحقیقی کام پہلے سے ہی بیگ میں ہیں۔ شاید اس کو مرکزی قیادت کے بغیر نکالا جا سکتا ہے۔ لیکن شاید اس کو کرنے کے لئے دل کی ضرورت ہو گی۔

تحریر: مائیک آرکٹ

Read in English

Authors
Top