Global Editions

پاکستان میں کرونا وائرس: عید کے حفاظتی قواعد کی تصدیق، انفیکیشنز کی تعداد میں کمی جاری

Reuters
ماہرین کا خیال ہے کہ پاکستان میں کرونا وائرس کے کیسز میں کمی آنا شروع ہوگئی ہے۔ دوسری طرف حکومت عید الاضحیٰ کے لیے آن لائن سہولیات سے مستفید ہونے کی تلقین کررہی ہے۔

اعداد و شمار: جمعہ کی صبح تک، پاکستان میں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 243،599 تک پہنچ گئی تھی، جبکہ اب تک 149،092 افراد صحتیاب ہوچکے ہيں۔ اس وقت سب سے زيادہ، یعنی 100,900 کیسز، صوبہ سندھ میں سامنے آئے، جبکہ صوبہ پنجاب سے 85,261، بلوچستان سے 11,099، خیبرپختونخواہ سے 29,406، اسلام آباد سے 13,829، گلگت بلتستان سے 1,619، اور آزاد جموں و کشمیر سے 1,485 کیسز کی اطلاعات موصول ہوچکی ہیں۔ نئے کیسز کی تعداد میں کمی نظر آرہی ہے۔ کراچی میں مئی کے بعد پہلی دفعہ ایک دن میں 1،000 سے کم کیسز کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں اور پنجاب میں ٹرانسمیشن کی شرح کم ہو کر 30 فیصد ہوچکی ہے۔ ماہرین کا خیال ہے کہ انفیکشنز کی زیادہ سے زيادہ تعداد جون میں سامنے آئی تھی اور اب کیسز میں کمی شروع ہوجائے گی۔

آن لائن قربانی: بیشتر ضلعوں کی انتظامیہ نے کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی روک تھام کے لیے بڑے شہروں میں قربانی کے جانوروں کی منڈیاں قائم کرنے پر ممانعت عائد کردی ہے۔ اس کے نتیجے میں متعدد صارفین نے جانوروں کی خرید و فروخت کے لیے آن لائن سہولیات سے فائدہ اٹھانا شروع کردیا ہے۔ کئی لوگوں نے سوشل میڈیا پر اپنے جانور مہنگے داموں فروخت کرنے کے حوالے سے اشتہار لگانا شروع کردیے ہيں۔ ان سہولیات میں جانوروں اور قربانی کے بعد گوشت کی ہوم ڈیلیوری شامل ہيں۔

سمارٹ لاک ڈاؤنز: پاکستان بھر میں متاثرہ علاقہ جات کے باہر وائرس کی ٹرانسمیشن کی روک تھام کے لیے سمارٹ لاک ڈاؤن کا سلسلہ جاری ہے۔ پنجاب اور بلوچستان کی حکومتوں نے 15 جولائی تک سمارٹ لاک ڈاؤن میں توسیع کردی ہے۔ صوبہ پنجاب کی انتظامیہ نے لاہور کی 61 سیل کردہ علاقہ جات کھولنے کے بعد شہر کے ساتھ دیگر علاقہ جات میں مکمل لاک ڈاؤن نافذ کیا ہے۔ صوبہ سندھ کی حکومت نے ایک ملتے جلتے اعلامیہ کے ذریعے سمارٹ لاک ڈاؤن کی توسیع کے علاوہ تعلیمی اداروں اور سیر و تفریح کے مقامات پر پابندی جاری رکھنے کا اعلان کیا ہے اور پبلک ٹرانسپورٹ کے محدود اوقات کے دوران کام کرنے کی اجازت دے دی ہے۔ خیبرپختونخواہ میں حکام کا کہنا ہے کہ سمارٹ لاک ڈاؤن کی بدولت انفیکشن کی شرح میں 70 فیصد کی کمی ہوئی ہے، جس کی وجہ سے صوبے کے 89 علاقہ جات میں لاک ڈاؤن میں توسیع کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

عالمی صورتحال: وزیراعظم عمران خان نے غریب عوام کو وبا کے اثرات سے محفوظ رکھنے کے لیے بین الاقوامی تعاون اور مشترکہ کوششوں کی اپیل کی ہے۔ دوسری طرف امریکی امیگریشن اور کسٹمز اینفارسمنٹ (United States and Customs Enforcement) نے اعلان کیا ہے کہ جن بیرون ملکی طلباء کی یونیورسٹیاں موسم خزاں کے سیمسٹر میں صرف آن لائن کلاسز منعقد کریں گی، انہيں واپس اپنے ملک جانا ہوگا۔ برطانیہ میں روزگار کے تحفظ اور سیاحت کے شعبے کو امداد فراہم کرنے کے لیے ایک نئی بونس سکیم متعارف کی گئی ہے۔ آسٹرالیا کے شہر میلبرن میں covid-19 کے کیسز کے اچانک اضافے کے بعد دوبارہ لاک ڈاؤن نافذ کردیا گیا ہے اور انفیکشنز کی دوسری لہر متوقع ہے۔

تحریر: ٹی آر پاکستان

Read in English

Authors

*

Top