Global Editions

پاکستان میں کرونا وائرس: انفیکشن کی دوسری لہر کی روک تھام کے لیے سماجی دوری کے نئے قواعد جاری کر دئیے گئے

عید الاضحیٰ کی آمد کو مدنظر رکھتے ہوئے سماجی دوری کے قواعد و ضوابط مزيد سخت کردیے گئے ہيں اور سمارٹ لاک ڈاؤنز کا سلسلہ دوبارہ شروع ہوگیا ہے۔

 اعداد و شمار: جمعہ کی صبح تک پاکستان میں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 277،539 تک پہنچ گئی ہے جبکہ 5،926 افراد کی اموات واقع ہوچکی ہیں۔ صوبہ سندھ سے 120،052، پنجاب سے 92،655، خیبرپختونخواہ سے 33،958، بلوچستان سے 11،732، گلگت بلتستان سے 2،090، آزاد جموں و کشمیر سے 2،065، اور اسلام آباد سے 14،987 کیسز کی رپورٹس موصول ہوئی ہیں۔ اب تک 246،131 مریض صحتیاب ہوچکے ہيں۔

دوسری لہر کی توقع: آ‏غا خان یونیورسٹی اور چائنیز یونیورسٹی آف ہانگ کانگ کے ایک مشترکہ مطالبے کے مطابق چھ میں سے ایک پاکستانی بے احتیاطی کے باوجود بھی خود کو اس وائرس سے محفوظ سمجھتا ہے۔ یہ بات بھی سامنے آئی کہ کئی پاکستانی کرونا وائرس کے حوالے سے سنجیدہ نہيں ہیں اور وہ سمجھتے ہيں کہ اگر وہ انفیکشن کا شکار ہو بھی گئے تو وہ زندہ بچ جائيں گے۔ ریسرچ ٹیم کے مطابق عدم سنجیدگی اور احتیاطی تدابیر کو نظرانداز کرنا ایک پریشان کن صورتحال ہے۔

اعداد و شمار کی غیردرستی کے متعلق خدشات: ماہرین کو خدشہ ہے کہ پاکستان میں کرونا وائرس کے کیسز میں کمی کی وجہ درحقیقت یہ ہے کہ انفیکشنز اور اموات کی تعداد کو کم کرکے بتایا جارہا ہے۔ عید الاضحیٰ کو مدنظر رکھتے ہوئے شہریوں کو غیرضروری سفر، عید کی دعوتوں، اور اجتماعی عبادات میں شرکت سے اجتناب کرنے کی تلقین کی گئی ہے تاکہ پاکستان میں انفیکشنز کے خطرے کو کم کیا جاسکے اور دوسری لہر کی روک تھام ممکن ہو۔

قواعد و ضوابط پر عمل کرنے کی تلقین: پاکستان میں کرونا وائرس کے باعث شرح اموات میں 80 فیصد کمی آئی ہے، اور اس شرح کو مزید کم کرنے کے لیے حکومت کی کوششیں جاری ہیں۔ عید کی تیاریوں کے دوران احتیاطی تدابیر کی پیروی کو یقینی بنانے کے لیے مویشی منڈیوں کے لیے سماجی دوری کے قواعد و ضوابط جاری کردیے گئے ہيں، جانوروں کی آن لائن خرید و فروخت کی تلقین کی جارہی ہے، اور جانوروں کی قربانی کے دوران احتیاطی تدابیر کی فہرست جاری کردی گئی ہے۔

سمارٹ لاک ڈاؤنز دوبارہ نافذ کردیے گئے ہيں: مئی میں عید الفطر کے باعث دکانوں اور شاپنگ مالز میں بھیڑ کے باعث کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد میں اچانک اضافہ سامنے آیا تھا۔ اس بار عید الاضحیٰ کے موقع پر اس قسم کی صورتحال کو روکنے کے لیے حکومت نے عید کی آمد سے پہلے سمارٹ لاک ڈاؤنز کا سلسلہ دوبارہ شروع کردیا ہے۔ صوبہ پنجاب میں لاہور اور دیگر شہروں میں سمارٹ لاک ڈاؤنز عملدرآمد کردیے گئے ہيں اور عید کی باجماعت نماز کے لیے تحفظ اور سماجی دوری کے حوالے سے انتظامات کیے جاچکے ہیں۔ بلوچستان کی صوبائی حکومت نے بھی شہریوں کو عید کے دوران سماجی دوری کے قواعد پر عمل کرنے کی تلقین کی ہے اور انہيں انتباہ دیا ہے کہ covid-19 کے کیسز میں اضافے کی صورت میں لاک ڈاؤنز کو مزید سخت کردیا جائے گا۔

تحریر: ٹی آر پاکستان

تصویر: اے ایف پی

Read in English

Authors

*

Top