Global Editions

پاکستان میں سمارٹ لاک ڈاؤن رنگ لا رہا ہے، کرونا وائرس کے یومیہ انفیکشنز میں کمی

ایف بی آر نے کرونا وائرس کی ادویات کو ٹیکسز سے مستثنیٰ قرار دیا ہے، جبکہ حکومت نے عید قرباں کو مدنظر رکھتے ہوئے قواعد و ضوابط میں ترمیم کی ہے۔

اعداد و شمار: جمعے کی دوپہرتک، پاکستان میں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 195,745 تک پہنچ گئی تھی، جبکہ 3,962 افراد کی موت واقع ہوچکی تھی۔ اس وقت سب سے زیادہ کیسز، یعنی 75,168 کیسز، صوبہ سندھ میں سامنے آئے ہيں، جبکہ صوبہ پنجاب سے 71,987، خیبر پختونخواہ سے 24,303، بلوچستان سے 9,946، اسلام آباد سے 11,981، گلگت بلتستان سے 1,398 اور آزاد جموں و کشمیر سے 962 کیسز کی اطلاعات سامنے آئی ہيں۔

سماجی دوری: پچھلے ہفتے کے دوران، پاکستان میں یومیہ کیسز کی تعداد میں کمی آنا شروع ہوئی۔ ٹیسٹنگ کی گنجائش میں اضافے کے باوجود، یومیہ اموات میں بھی کمی ہوئی ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ اس کا سہرا ملک بھر کے مختلف covid-19 کے ہاٹ سپاٹس میں نافذ کردہ سمارٹ لاک ڈاؤنز کو جاتا ہے۔ صوبہ پنجاب کے سات شہروں میں جن علاقہ جات میں انفیکشن کی شرح زيادہ پائی گئی، وہاں پولیس کی ناکہ بندی کر دی گئی ہے۔  ان علاقہ جات کی نشاندہی کی ذمہ داری ہر ضلع کے ڈپٹی کمیشنرز کو سونپی گئی تھی۔

خلاف ورزياں: حکومت کے سمارٹ لاک ڈاؤنز پر اس قدر زور دینے کے باوجود، صحت کی گائيڈ لائنز اور شہریوں کی نقل و حرکت پر عائد کردہ پاندیوں کی بار بار خلاف ورزی کی جارہی ہے۔ قانون نافذ کرنے والے حکام کی اس نقل و حرکت کو محدود کرنے کی ناکامی سے ایک بار پھر انفیکشنز کی تعداد میں اضافہ ممکن ہے۔ خلاف ورزیوں کے باوجود، لاہور کے مزيد 40 علاقہ جات میں سمارٹ لاک ڈاؤنز نافذ کیے جائيں گے۔

عید الاضحیٰ کی تیاریاں: جیسے جیسے عید الاضحیٰ قریب آرہی ہے، بکرا منڈیوں کے باعث حکومتی گائيڈلائنز کی خلاف ورزیوں اور وائرس کے پھیلاؤ کے امکانات میں بھی اضافہ ہوتا ہوا دکھائی دے رہا ہے۔ خیبرپختونخواہ میں قربانی کے جانوروں کی منڈیوں کو سماجی دوری کی گائيڈلائنز کی تعمیل کی شرط پر حسب معمول قائم کرنے کی اجازت دی گئی ہے، جبکہ صوبہ سندھ  کی حکومت نے ان مارکیٹوں پر مکمل پابندی عائد کردی ہے۔ صوبہ پنجاب میں مارکیٹس صرف لاہور کے حدود کے باہر قائم کی جاسکيں گی۔

ٹیکسز کا خاتمہ: فیڈرل بورڈ آف ریونیو (Federal Board of Revenue) نے covid-19 کے علاج کے لیے استعمال ہونے والی دوا ریمڈیسیور (remdesivir) کے درآمدات کو ٹیکسز سے مستثنیٰ قرار دے دیا ہے۔ اس کے علاوہ کرونا وائرس کی نشاندہی اور علاج میں معاونت فراہم کرنے والے دیگر 60 آئیٹمز کو بھی ٹیکسز سے استثنیٰ حاصل ہے۔

تحریر: ٹی آر پاکستان

Read in English

Authors

*

Top