Global Editions

کیا یہ ڈم فون ہماری اسمارٹ فون کی لت سے جان چھڑواسکتا ہے؟

لائٹ فون آپ کو کالیں کرنے اور موصول کرنے دیتا ہے – اور بس!

میرا اسمارٹ فون کئی طریقوں سے ایک ڈیجیٹل سیکورٹی بلینکٹ کی طرح ہے۔ میں صبح اٹھتے ہی اس کی چمکتی اسکرین کو اپنی بانہوں میں لے لیتی ہوں، اسے دن بھر تھامے رکھتی ہوں اور رات کو چارج ہونے کے لئے لگادیتی ہوں۔

میں اس آلے پر اتنا انحصار کرنے لگی ہوں کہ مجھے اس کے بغیر بہت عجیب لگنے لگتا ہے۔

لیکن اس کے ساتھ ہی، یہ انحصار ایک بیڑی کی طرح لگنے لگتا ہے اور بعض دفعہ اس مسلسل کنکٹیویٹی سے دور بھاگنے کا دل چاہتا ہے۔ میرے علاوہ کئی لوگ اس مسئلے سے دوچار ہیں، لہذا کچھ کمپنیوں نے نہایت خوبصورت "ڈم فون" نکالے ہیں جن کا مقصد آپ کو آپ کے اسمارٹ فون سے کچھ عرصے کے لئے چھٹکارا دلانا ہے۔

ان میں سے ایک آلہ لائٹ فون نامی نہایت ہی پتلا سا آلہ ہے۔ یہ آپ کو کوئی کال مس کئے بغیر اپنے اسمارٹ فون سے آزاد کرنے کا وعدہ کرتا ہے: جب بھی کوئی آپ کے اسمارٹ فون کے نمبر پر کال کرتا ہے، اس کال کو آن لائن سرور کے ذریعے آپ کے لائٹ پر فارورڈ کر دیا جاتا ہے۔ آپ جو بھی کالیں کریں گے، وہ اس طرح لگیں گی جیسے کہ وہ آپ کے ہی نمبر سے کی جارہی ہيں۔ کریڈٹ کارڈ کے سائز کا یہ آلہ دو سال قبل ایک کک اسٹارٹر کے پراجیکٹ کی شکل میں شروع ہوا تھا، اور $150 کے علاوہ $5 کی ماہانہ فیس کے عوض اپریل میں عمومی طور پر دستیاب ہونے والا ہے۔

لائٹ فون کا اپنا سم کارڈ ہے، لہذا اسے کام کرنے کے لئے اسمارٹ فون کے قریب ہونا ضروری نہيں ہے۔ پاور بٹن دبانے تک یہ صرف ایک پتلی سی پلاسٹک کی سل کی طرح ہی لگتا ہے، لیکن بٹن دبانے کے بعد اس کی بتیاں جل جائيں گی اور ایک نمبر پیڈ اور ایک لائن پر مشتمل ڈسپلے ظاہر ہوجائے گا۔

یہ واقعی ایک بہت سادہ سا فون ہے:یہ فون کالیں کرسکتا ہے اور کالیں موصول کرسکتا ہے، لیکن اس کے علاوہ کچھ نہيں کرسکتا ہے۔ ٹیکسٹ، ای میل، اطلاعات یا وائس میل ممکن نہيں ہیں۔ اگر کوئی آپ کو کال کرتا ہے لیکن آپ جواب نہيں دیتے ہيں، انہيں ایک روبوٹک زنانہ آواز میں بتایا جائے گا "میں اپنا لائٹ فون استعمال کررہا ہوں، اور اس وقت موجود نہيں ہوں۔" اس کے بعد لائٹ فون کال کاٹ دے گا۔

جب میں نے اسے آزمایا، تو یہ بات بہت جلد واضح ہوگئی کہ لائٹ فون جتنا آسان استعمال لگتا ہے، اتنا ہے نہیں۔ آپ کو اسے سیٹ اپ کرنے کے لئے، اور اس کے نو پروگرام ایبل اسپیڈ ڈائل روابط میں سے کسی ایک میں ردوبدل کرنے کے لئے کمپیوٹر کے ساتھ متصل کرنے کی ضرورت ہے۔ اور کال فارورڈنگ استعمال کرنا کافی سردرد ہے: مجھے اسے آن کرنے کے لئے اپنے اسمارٹ فون کے کانٹیکٹ لسٹ میں محفوظ کیا گیا ایک نمبر ڈائل کرنا پڑا، اور پھر اسے بند کرنے کے لئے دوسرا نمبر ڈائل کرنا پڑا۔

اس مسئلے کو حل کرنے کے بعد، میں نے لائٹ فون کو اپنی جیب میں ڈالا اور اپنے اسمارٹ فون کو گھر پر چھوڑ کر نکل پڑی۔

کچھ دیر بعد مجھے معلوم ہوا کہ اسمارٹ فون کے بغیر چلنے پھرنے سے میں اسکرین میں محو ہونے کے بجائے اپنے اطراف کی چیزوں سے لطف اندوز ہورہی تھی۔ مسلسل طور پر متصل زندگی سے دور رہنا بہت اچھا لگ رہا تھا، اور ٹوئیٹر اور انسٹراگرام دیکھنے کی خواہش ختم ہونے کے بعد میرا ذہن صاف محسوس ہونے لگا۔ میں نے سوچا کہ اگر کسی کو مجھ سے بات کرنی ہوگی تو وہ مجھے کال کرلیں گے۔

اور ایسا ہی ہوا۔ میرے شوہر نے میری کال کے جواب میں مجھے واپس کال کیا اور ہم نے چند منٹوں تک ٹھیک ٹھاک بات کرلی۔ میں نے جو دوسری کالیں کیں اور موصول کیں، ان سب کی طرح اس کی آواز بھی صاف نہيں تھی، لیکن مجھے اتنا سمجھ آگیا تھا کہ مجھے المونیم فوائل خریدنا تھا۔

تاہم میں اس ہینڈسیٹ پر زیادہ دیر تک بات نہیں کرنا چاہوں گی۔ کال کوالٹی کے علاوہ، اسے اپنے کان تک لے جانا بھی تھوڑا سا عجیب لگتا ہے، کیونکہ اس کی لمبائی ساڑھے آٹھ سنٹی میٹر سے تھوڑی زیادہ ہے اور موٹائی آدھے سنٹی میٹر سے بھی کم ہے۔ اس کی سادہ شکل کی وجہ سے میں کم از کم ایک کال کے دوران فون کے پچھلے حصے کو اپنے گال کے ساتھ لگائی ہوئی تھی۔

لائٹ فون کے ڈسپلے میں بھی مسائل تھے۔ اسے تیز دھوپ میں استعمال کرنا ناممکن تھا۔ میں نے یہ بھی دیکھا کہ اگر مجھ سے ایسی کوئی کال مس ہوجائے جو میری اسپیڈ ڈائل کی فہرست میں نہ ہو، تو مجھے کال کرنے والے کا فون نمبر دکھانے کے دوران، نمبر کا آخری ہندسہ غائب ہوجاتا تھا۔

اس کی بیٹری لائف بھی زیادہ اچھی نہيں ہے – اور جس آلے کا زيادہ کوئی کام نہيں ہے، اس کے لئے یہ بہت حیران کن بات ہے۔ چند کالوں اور تقریبا پانچ گھنٹوں کے بعد، اس میں 61 فیصد کمی آچکی تھی؛ اگلے روز دوپہر تک چند مختصر کالوں اور کئی گھنٹے فارغ رہنے کے بعد بیٹری 20 فیصد رہ چکی تھی۔ ہینڈسیٹ زیادہ تر وقت فارغ ہی تھا اور اس کا ڈسپلے بھی بند ہی تھا، اس حساب سے مجھے لگا تھا کہ اس کی بیٹری زيادہ لمبی چلنے والی تھی۔

آخری بار کال فارورڈنگ بند کرنے کے بعد مجھے کافی مایوسی ہوئی۔  میں چاہ رہی تھی کہ مجھے لائٹ فون پسند آجائے، اور اسے اپنی جیب میں رکھنے سے مجھے اس تحفظ کا احساس ضرور ہوا جس کے لئے میں عمومی طور پر اپنے اسمارٹ فون پر انحصار کرتی ہوں۔ لیکن مجھے کسی ایسے فون کے لئے جو صرف کبھی کبھار ہی کام آئے، آرام دہ محسوس کرنے کے لئے، وہ جو تھوڑی بہت چیزیں کرتا ہے، اسے وہ چند چیزیں بہت اچھے طریقے سے کرنی چاہئیے۔ ورنہ جب میرا اسمارٹ فون میرے پاس نہ ہو تو مجھے یاد آتا رہے گا، اور میں اس سے دور گزارے وقت سے لطف اندوز نہیں ہو پاؤں گی۔

تحریر: ریچل میٹز (Rachel Metz)

Read in English

Authors
Top