Global Editions

کوکو بینز سے چاکلیٹ بنانے کے لیے ٹیکنالوجی کا کس طرح استعمال کیا جاتا ہے؟

چاکلیٹ کئی ہزار سال پہلے میکسیکو میں ایجاد ہوئی تھی، اور آج آٹومیشن کی بدولت چاکلیٹ کی فیکٹریوں میں انقلاب آچکا ہے۔

میں میکسیکو میں واقع ای کام کوکو (ECOM Cocoa) نامی کمپنی کا پلانٹ مینیجر ہوں۔ ہم آئیوری کوسٹ، کیمرون، ایکواڈور، پیرو، کولمبیا، جمہوریہ ڈومینیکن، اور میکسیکو سے بیج خریدتے ہیں۔ ہم ہر دسمبر آنے والے سال کی منصوبہ بندی کرتے ہيں، اور ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ ہمیں کب کتنے ٹن بیج خریدنے کی ضرورت ہے۔

میں نے 2003ء میں یہاں کام کرنا شروع کیا۔ اس وقت ہم سالانہ بنیاد پر 7،000 میٹرک ٹن پراسیس کرنے کی صلاحیت رکھتے تھے اور آج ہم 40،000 ٹن سالانہ پراسیس کر سکتے ہيں۔ 2010ء میں ہم نے اپنے پلانٹ کے آپریشنز کے پیمانے میں اضافہ کیا۔ پھر 2016ء میں ہم بادام وغیرہ پر چاکلیٹ چڑھا کر بیچنے لگے۔ ہم یہاں بڑی ملٹی نیشنل کمپنیوں کو چاکلیٹ فروخت کرتے ہيں، اسی لیے ہمارے پاس غلطی کی کوئی گنجائش نہيں ہے۔ کوکو بینز سے بنی مصنوعات کی بہتات ہونے کی وجہ سے آپ کے لیے اپنے گاہکوں کو اچھی قیمتوں پر سپلائی کرنا بہت ضروری ہوتا ہے۔ ای کام دنیا بھر کے 10 فیصد کوکو کی پراسیسنگ کرتی ہے، اور پوری دنیا کا ایک فیصد کوکو ہمارے پلانٹ میں پراسیس ہوتا ہے۔

ہماری فیکٹری میں کوکو بینز کو بھوننے سے لے کر پیکیجنگ تک، ہر کام مشینوں سے ہوتا ہے۔ ہماری تمام مشینیں یورپ میں بنتی ہیں اور ان کی پروگرامنگ کرنے والے کمپیوٹرز جرمنی میں۔ ہم نے چند سال پہلے نیدرلینڈز سے 30 لاکھ ڈالر کی مشینیں خریدی ہیں۔

آج سے 20 سال پہلے نیسلے نامی ملٹی نیشنل کمپنی نے میکسیکو میں اپنی فیکٹری بند کر دی اور ای کام نے ان کی پرانی مشینیں خرید لیں۔ اس وقت 100 فیصد کام ہاتھ سے ہوتا تھا۔ آج 95 فیصد کام مشینوں سے ہوتا ہے۔ اس سے ہمارے لیے انسانی وسائل کے اخراجات میں کمی لانا ممکن ہوا ہے۔ ہماری مشینوں کی گنجائش میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

تحریر: روگیلیو راڈریگز سوبرینز (Rogelio Rodríguez Soberanes)

Read in English

Authors

*

Top