Global Editions

Author Archives: MIT PK

جین ایڈیٹنگ ٹیکنالوجی کی مدد سے گھر پر استعمال ہونے والے کرونا وائرس کے ٹیسٹس کی تلاش جاری

جین ایڈیٹنگ ٹیکنالوجی کی مدد سے گھر پر استعمال ہونے والے کرونا وائرس کے ٹیسٹس کی تلاش جاری

نام: عمر ابوداییح (Omar Abudayyeh) عمر: 30 سال ادارہ: ایم آئی ٹی جائے پیدائش: امریکہ کرسپر ٹیکنالوجی (CRISPR) کی مدد سے بائیومیڈيکل اور جینیاتی امراض میں انقلاب لانا ممکن ہے، جس کی وجہ سے اسے اس صدی کی سب سے اہم ایجاد تصور کیا جاتا ہے۔ لیکن اگر عمر ابوداییح کی کوششیں کامیاب ہوجائيں تو …مزید پڑ ھیں

پاکستان میں کرونا وائرس: تعلیمی ادارے کھلنے کے بعد کیسز کی تعداد میں بتدریج اضافہ

اعداد و شمار: جمعہ کی دوپہر تک، پاکستان میں covid-19 کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد 309,015 تک جا پہنچی تھی۔ اب تک 6,444 افراد کی اموات واقع ہوچکی ہيں، جس میں سے پچھلے 24 گھنٹوں میں سات اموات کی تصدیق ہوئی ہے۔ اب تک 294,740 مریض صحتیاب ہوچکے ہیں۔ بظاہر تو ایسا لگ رہا …مزید پڑ ھیں

مصنوعی ذہانت کے سسٹمز کے نسلی تعصب کو کس طرح ختم کیا جاسکتا ہے؟

نام: انیولووا ڈیبرا راجی (Inioluwa Deborah Raji) عمر: 24 سال ادارہ: اے آئی ناؤ انسٹی ٹیوٹ (AI Now Institute) جائے پیدائش: نائیجیریا انیولووا ڈیبرا راجی بتاتی ہیں کہ انہوں نے مصنوعی ذہانت پر ریسرچ اس وقت شروع  کی جب انہيں ان سسٹمز کی ایک بہت بڑی خامی کا احساس ہوا۔ اپنے کالج کے زمانے میں …مزید پڑ ھیں

مشین لرننگ کے ذریعے پارکنسنز کا علاج کس طرح ممکن ہے؟

نام: کیتھارینا وولز (Katharina Volz) عمر: 33 سال ادارہ: اوکیمز ریزر (OccamzRazor) جائے پیدائش: جرمنی 2016ء میں کیتھارینا وولز کو خبر ملی کہ ان کے ایک قریبی رشتہ دار پارکنسنز (Parkinson’s) کا شکار ہیں۔ انہوں نے حال ہی میں سٹینفورڈ یونیورسٹی سے اپنا پی ایچ ڈی مکمل کیا تھا اور وہ اس وقت سٹیم سیلز …مزید پڑ ھیں

حیاتیاتی اجزا سے بنا یہ پلاسٹک پانی میں گھل جاتا ہے

نام: اویناش منجولا باساوانا (Avinash Manjula Basavanna) عمر: 33  سال ادارہ: وس انسٹی ٹیوٹ (Wyss Institute)، ہارورڈ یونیورسٹی جائے پیدائش: بھارت پوری انسانی تاریخ میں 9.1 ارب ٹن پلاسٹک بنایا جاچکا ہے، لیکن اس میں سے صرف نو فیصد پلاسٹک کو دوبارہ استعمال میں لایا گیا ہے۔ 80 فیصد پلاسٹک یا تو کچرا کونڈیوں میں …مزید پڑ ھیں

اب انجنیئرنگ سمجھے بغیر بھی مصنوعات ڈیزائن کرنا ممکن ہے

نام: ایڈریانا شلز (Adriana Schulz) عمر: 34 سال ادارہ: یونیورسٹی آف واشنگٹن جائے پیدائش: برازیل ایڈریانا شلز نے ایسے ٹولز ایجاد کیے ہیں جن کی مدد سے عام صارفین میکانکس، جیومیٹری یا پیچیدہ انجنیئرنگ کی سمجھ بوجھ رکھے بغیر روبوٹس سے لے کر کبوترخانوں تک، کئی مختلف قسم کی چیزيں بناسکتے ہيں۔ ان ٹولز کو …مزید پڑ ھیں

انسانی دماغ کو مشینوں کے ساتھ جوڑنے والی کمپیوٹر چپس ایجاد کی جارہی ہیں

نام: ڈونگجن سیو (Dongjin Seo) عمر: 31 سال ادارہ: نیورالنک (Neuralink)  جانے پیدائش: امریکہ سات سال پہلے ڈونگجن سیو عرف ”ڈی جے“ نے کہا تھا کہ وہ ہمیشہ ہی ایسا سائنسدان بننا چاہتے تھے جس کے لیے انجنیئرنگ کے ذریعے ”دنیا بدلنا بائیں ہاتھ کا کھیل ہو-“ وہ اس وقت یونیورسٹی آف کیلیفورنیا، برکلے، کے …مزید پڑ ھیں

اب کم آمدنی والے ممالک میں رہائش پذیر افراد کے لیے مصنوعی بازو اور ٹانگیں دستیاب ہوسکتے ہيں

نام: محمد ضاؤآفی (Mohamed Dhaouafi) عمر: 28 سال ادارہ: کیور بائیونکس (Cure Bionics) جائے پیدائش: تیونس چار سال پہلے یونیورسٹی کے ایک مقابلے کے دوران، محمد ضاؤآفی کو معلوم ہوا کہ ان کی ٹیم کے ایک رکن کا کزن بغیر بازوؤں کے پیدا ہوا تھا، اور اس کے گھر والے مصنوعی بازو لگوانے کی سکت …مزید پڑ ھیں

خودکار گاڑيوں کو دیکھنے میں مدد کے لیے نیورل نیٹورکس کا استعمال کیا جارہا ہے

نام: ایندریج کارپتھی (Andrej Karpathy) عمر: 33 سال ادارہ: ٹیسلا (Tesla) جائے پیدائش: سلوواکیا عرصہ دراز سے کمپیوٹر سائنسدان یہی خواب دیکھ رہے ہيں کہ کمپیوٹرز میں کسی طرح ”دیکھنے“، یعنی چیزوں کو دیکھنے اور سمجھنے کی صلاحیت پیدا ہوجائے۔ لیکن اینڈریج کارپتھی سے پہلے بہت ہی کم سائنسدان تھے جو اس مقصد میں کامیاب …مزید پڑ ھیں

جوہری ری ایکٹرز اور ڈی سیلینیشن پلانٹس پر انحصار کرنے والے ممالک ڈیٹا کی مدد سے بحرانوں کے لیے کس طرح تیاری کر سکتے ہیں؟

نام: غناء الحنائی (Ghena Alhanaee) عمر: 30 سال ادارہ: یونیورسٹی آف سدرن کیلیفورنیا جائے پیدائش: متحدہ عرب امارات یونیورسٹی آف سدرن کیلیفورنیا میں اپنے پی ایچ ڈی کے دوران، غناء الحنائی کو یہ جان کر بہت پریشانی ہوئی کہ ان کے آبائی ملک متحدہ عرب امارات سمیت خلیج فارس کے دوسرے ممالک آفات کے لیے …مزید پڑ ھیں

Top