Global Editions

ایمزون کے ڈلیوری ڈرون نے پہلے صارف کو سامان پہنچا دیا

آن لائن خریداری کی معروف ویب سائٹ ایمزون نے اپنے پہلے صارف کو سامان کی ترسیل ڈرون کے ذریعے کرنے کا مرحلہ سرانجام دے دیا ہے۔ اگرچہ سامان کی ترسیل کو باضابطہ کے بجائے تجرباتی قرار دیا جا سکتا ہے تاہم یہ اس سمت میں بہت بڑا قدم ہے۔ ادھر امریکہ میں محکمہ شہری ہوا بازی کی جانب سے ڈرونز کے لئے سخت قواعد وضع کئے گئے ہیں جن کے تحت ڈرونز پانچ سو فٹ کی بلندی سے زیادہ اونچائی پرواز نہیں کر سکتے اور اس کے ساتھ ساتھ ڈرونز آپریٹر کی نگاہ سے اوجھل نہیں رہ سکتے۔ ان پابندیوں کی وجہ سے ایمزون نے اپنے ترسیلی ڈرون کا تجربہ برطانیہ میں کیا ہے۔ اس ضمن میں اس تجربے کے لئے باقاعدہ طور پر جیف بیزوس (Jeff Bezos) نے برطانوی محکمہ شہری ہوابازی کے ساتھ ایک معاہدہ کیا تاکہ امریکہ کے بجائے اس ترسیلی ڈرون کا تجربہ برطانیہ میں ممکن ہو سکے۔ اس تجربے کے لئے کیمبرج برطانیہ میں ایک آزمائشی تجربہ گاہ تیار کی گئی اور وہاں پر ایمزون نے ایک مرکز اور ڈرون کے لئے لانچ پیڈ تیار کیا۔ ڈرون پر پانچ پاؤنڈ وزنی سامان رکھا گیا اور پھر اس ڈرون کو فضا میں بلند کر دیا گیا۔ اس ڈرون نے جی پی ایس کی مدد سے ازخود صارف کی رہائش گاہ کا تعین کیا اور چارسو فٹ بلندی سے کم پر پرواز کرتے ہوئے سامان صارف کے گھر تک پہنچا دیا۔ ان تجربات کے دوران دو صارفین کے گھروں تک سامان کی ترسیل کی گئی۔ اس تجربے کو حقیقی ترسیلی طریقہ تصور نہیں کیا جا سکتا بظاہر تو ایک تشہیری حربہ ہی قرار دیا جا سکتا ہے۔ تاہم ان تجربات کے بعد یہ بھی کہا گیا ہے کہ اس طریقے کے تحت سامان کی ترسیل کی تعداد بڑھائی جائے گی پہلے ایسی پروازوں کی تعداد درجنوں تک بڑھائی جائے گی اور اس کے بعد ان پروازوں کی تعداد سینکڑوں تک پہنچائی جائیگی۔ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ اگر یہ سلسلہ اس طرح جاری رہا تو وہ وقت جلد آئیگا جب آسمان ان چھوٹے طیاروں سے بھرا ہوا ہی دکھائی دے گا۔ ایمزون کا کہنا ہے کہ وہ اس طریقے کے تحت پروازوں کی تعداد بڑھائے گی تاہم اس کے ساتھ ساتھ یہ نہیں بتایا گیا کہ ان چھوٹے ڈرونز میں بیٹری ٹائم اور ان کی کارکردگی میں اضافے کئے کیا اقدامات اٹھائے گئے ہیں۔ ان اقدامات کے بغیر برطانیہ کے دیہی علاقے میں تو اس طرح کی پروازیں ممکن ہیں تاہم شہری علاقوں یا کسی اور ملک میں اس طرح کی پروازوں کو کس طرح ممکن بنایا جائے گا اس سوال کا جواب ملنا ابھی باقی ہے۔

تحریر: جیمی کونڈیلفی (Jamie Condliffe)

Read in English

Authors
Top