Global Editions

کمپیوٹر انڈسٹری میں نئے رحجانات ، انٹل کے 12 ہزار ملازمین فارغ

کمپیوٹر انڈسٹری میں نئے رحجانات کے فروغ پانے اور نئی ٹیکنالوجیز کے میدان میں آنے سے کئی کمپیوٹر ساز ادارے کئی طرح کے بزنس مسائل سے دوچار ہو گئے ہیں، معروف ادارہ انٹل بھی کمپیوٹر انڈسٹری میں ہونے والی تیزرفتار ترقی کا مقابلہ کرنے میں ناکام رہا اور اب انٹل نے معاشی مسائل کے پیش نظر بارہ ہزار ملازمین کو فارغ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ملازمین کو فارغ کرنے کے باوجود مسائل ابھی کم نہیں ہونگے کیونکہ انٹل جن نرخوں پر اپنے چپ سیٹ اور ہارڈ وئیر فروخت کرتی تھی اب اس کے مقابلے میں زیادہ سستے اور اچھی کارکردگی کے حامل پرزہ جات مارکیٹ میں دستیاب ہیں۔ دوسری جانب پاکٹ سائز ڈیوائسز کی پسندیدگی میں اضافے اور نئے رحجانات کے فروغ کے سبب انٹل کی مصنوعات کی فروخت میں نمایاں کمی آئی ہے۔ نئے رحجانات جن میں مصنوعی ذہانت اور ورچوئل رئیالٹی شامل ہیں نے کمپیوٹر انڈسٹری کے اندر نئی جہتیں متعارف کرائی ہیں اور انٹل کمپنی اس جہت میں ہونے والی نئی ترقی سے خود کو ہم آہنگ کرنے میں ابھی تک کافی پیچھے دکھائی دیتی ہے۔ اب ہزاروں افراد کو گھر بھیجنے کے فیصلے سے بھی ظاہر ہوتا ہے کہ انٹل درست سمت میں اقدامات نہیں کر پائی۔ انٹل سمارٹ فونز اور ٹیبلٹس کے مقابلے کے لئے ڈیسک ٹاپ کمپیوٹرز کے بہترین متبادل تیار نہیں کر سکی اور اس ڈیجیٹل انقلاب کی دوڑ میں پیچھے رہ گئی ہے۔ اس امر کا اندازہ اس سے لگایا جا سکتا ہے کہ ریسرچ کمپنی گارٹنر Gartner کے مطابق صرف رواں سال کے پہلے تین ماہ میں انٹل کی PC شپمنٹس میں 9.6 فیصد کی کمی آئی ہے۔ اس صورتحال میں جب انٹل یہ قرار دیتی ہے کہ اب وہ اپنی توجہ کلائوڈ کمپیوٹنگ اور انٹرنیٹ سے منسلک ٹیکنالوجی کی طرف مبذول کرا رہی ہے تو وہ اس عمل سے ممکنہ طور پر اس میدان میں دستیاب کئی مواقع کھونے کا اقرار بھی کر رہی ہے لیکن اس کے ساتھ ساتھ کمپنی نئے رحجانات کے بارے میں کوئی واضح پالیسی یا لائحہ عمل نہیں رکھتی۔ نئے رحجانات میں سب سے اہم ورچوئل رئیالٹی ہے اور اس کے لئے بالکل مختلف انداز میں تیار کی جانیوالی چپ درکار ہوتی ہے۔ یہ کہا جا سکتا ہے کہ ملازمتوں میں کمی کے ساتھ اب انٹل کو نئے رحجانات جن میں مصنوعی ذہانت اور ورچوئل رئیالٹی شامل ہیں کی دوڑ میں شامل ہونے اور اس میدان میں نئی تخلیقات کے لئے کیا اقداماات کرتی ہے کیونکہ ایسا نہ کرنے سے ہو سکتا ہے کہ انٹل اس دوڑ سے بالکل باہر ہی نہ ہو جائے۔

تحریر: ول نائیٹ (Will Knight)

Read in English

Authors

*

Top