Global Editions

نجی شعبہ میں پہلی جین ایڈیٹنگ کمپنی کا قیام

نجی شعبہ میں جنین ایڈیٹنگ تکنیک استعمال کرنے کا ارادہ رکھنے والی پہلی کمپنی ایڈیٹاس (Editas) میدان میں آ گئی ہے جس کے بعد اب امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ مزید کئی کمپنیاں بھی اس میدان میں آ جائیں گی۔ یہ کمپنی رواں سال کے دوران پبلک ہو جائے گی اور اس کے لئے 94 ملین ڈالرز کی فنڈ ریزنگ کی گئی ہے۔ یہ کمپنی جینین ایڈیٹنگ کی نو دریافت شدہ تکنیک CRIPSR کی مدد سے جنین میں تبدیلیاں کر کے بیماریوں کا علاج کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ نئی کمپنی کا قیام دو وجوہات کی بناء پر اہم ہے، پہلی وجہ یہ کہ امریکہ اور پورے یورپ میں ابھی تک CRIPSR کی مدد سے بیماریوں کے علاج کی حکومتی سطح پر کوئی منظوری نہیں دی گئی ہے اور دلچسپ امر یہ ہے کہ ایڈیٹاس کو ابھی تک یہ بھی معلوم نہیں کہ اس کے پاس CRIPSR استعمال کرنے کا حق ہے بھی یا نہیں۔ دوسری وجہ یہ ہے کہ دو سائنس دان ( یونیورسٹی آف کیلیفورنیا کے جنیفر ڈونڈا اور ایم آئی ٹی انسٹیٹیوٹ کے بورڈ کے رکن فانگ ژی ہانگ) جنہوں نے یہ کمپنی قائم کی ہے ،انہوں نے الگ الگ یہ دعوی کیا ہے کہ وہ CRISPR تکنیک کے خالق ہیں۔ اس کمپنی کو قائم کرنے کے بعد دونوں اب نہایت پیچیدہ صورتحال کا شکار ہو چکے ہیں ایک جانب کمپنی کے قیام کے حوالے سے سوال اٹھ رہے ہیں اور دوسری جانب جنین ایڈیٹنگ کی تکنیک کے استعمال کی اجازت بھی بہت بڑا سوالیہ نشان ہے۔

تحریر: مشعل ریلائے (Michael Reilly)

Read in English

Authors

*

Top