Global Editions

موبائلز پر پیغام رسانی اب اور بھی آسان

موبائل فون کے ذریعے سماجی رابطے اور پیغام رسانی اب معمول کی بات ہے۔ موبائل فون میں موجود انٹرنیٹ یا وائی فائی کا استعمال کرکے سماجی روابط برقرار رکھنا اب تقریباً ہر مرد و زن کی ضرورت ہے، لیکن اس ضمن میں ضروری ہے کہ آپ انٹرنیٹ یا وائی فائی تک رسائی رکھتے ہوں، اگر انٹرنیٹ یا وائی فائی دستیاب نہ ہو یا موبائل فون کے سگنلز دستیاب نہ ہوں تو پیغام رسانی ناممکن ہو جاتی ہے۔ تحقیق کاروں نے اس قباحت کو دور کرنے کے لئے کافی کام کیا ہے اور ایک نئی موبائل ایپلی کیشن کے ذریعے موبائل فون کے ذریعے اس وقت بھی پیغام رسانی ممکن ہو گئی ہے جب آپ انٹرنیٹ یا وائی فائی کی سہولت سے محروم ہوں یا نیٹ ورک میں خرابی کے باعث سگنلز دستیاب نہ ہوں۔ فائر چیٹ (FireChat) نامی ایپلی کیشن میں اس مسئلے کو حل کرنے کی کوشش کی گئی ہے یہ ایپلی کیشن اس صورت میں بھی کام کرتی ہے جب موبائل نیٹ ورک موجود نہ ہو یا فون آف لائن ہو اس کے لئے فائر چیٹ(FireChat) پیغام رسانی کےلئے ہائپرلوکل (Hyperlocal) چیٹ رومز بناتی ہے جو کسی دوسرے وائی فائی نیٹ ورک استعمال کر کے پیٖغام رسانی کرتی ہے۔ یہ ایپلی کیشن اینڈروائیڈ اور ایپل آئی فونز کے لئے دستیاب ہے۔ آف لائن میسج بھجوانے کے لئے فائر چیٹ استعمال کرنے والوں کے نیٹ ورک کو استعمال کرتی ہے اور پیغام کو مقررہ فرد تک پہنچا دیتی ہے۔ یعنی آپ انٹرنیٹ یا وائی فائی دستیاب نہیں ہے اور آپ کو ضروری یا ذاتی پیغام بھجوانا ہے تو فائر چیٹ ایپلی کیشن یہ تلاش کرے گی کہ آپ کے قریب کوئی ایسا فائر چیٹ استعمال کنندہ موجود ہے جو انٹرنیٹ یا وائی فائی کنکشن استعمال کر رہا ہے اگر اسے یہ سہولت موجود نہ ہو تو وہ اس شہر، صوبے یا ملک میں موجود فائر چیٹ یوزرز کے ذریعے پیغام رسانی کر سکتا ہے کیونکہ ایک ہی وقت میں تمام فائر چیٹ یوزرز آف لائن نہیں ہو سکتے۔ اس ایپلی کیشن کے ذریعے آپ کے پیغامات زیادہ سے زیادہ دس منٹ میں مقررہ ہدف تک پہنچ جاتے ہیں اور پیغام کسی دوسرے یوزر پر ظاہر بھی نہیں ہوتے اس طرح وہ خفیہ ہی رہتے ہیں۔ اس عمل کو (Mesh Networking) کا نام دیا گیا ہے۔ ایپلی کیشن بنانے والے ادارے اوپن گارڈن (Open Garden) کے چیف مارکیٹنگ آفیسر کرسٹوفی ڈیلیگالٹ(Christophe Daligault) کا کہناہے کہ ہم نے آف لائن میسجنگ کے لئے یہ ایپلی کیشن استعمال کرنے والوں کو اس طرح استعمال کرتے ہیں کہ وہ ایک گروپ کی شکل اختیار کر لیتے ہیں اور اس گروپ کے زیر استعمال نیٹ ورک کی مدد سے ہم دوردراز علاقوں تک بھی رسائی حاصل کر لیتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ فائر چیٹ کا نیا ورژن آئی فون اور اینڈروائیڈ سمارٹ فونز کےلئے دستیاب ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ فائرچیٹ کو یقین ہے کہ یہ ایپلی کیشن انسانیت کی مدد کے لئے بھی کام کر سکتی ہے فرض کریں کہ کسی علاقے میں کوئی آسمانی آفت آئی ہے اور وہاں فائر چیٹ کی مدد سے مقام کو تلاش کر کے متاثرین کی مدد کی جا سکتی ہے تاہم ابھی یہ ایک خیال ہی ہے لیکن اس پر کام جاری ہے ان کا مزیدکہنا تھا کہ صارفین سے اس ایپلیکیشن کے استعمال کے کوئی پیسے نہیں لئے جائینگے۔ تاہم انہوں نے اپیل کی کہ انسانیت کی فلاح و بہبود کے لئے کام کرنے والے ادارے ہماری مدد کے لئے آگے آئیں تاکہ اس ایپلی کیشن کو زیادہ عوام دوست بنایا جاسکے اور آفات سماوی کی صورت میں اس ایپلیکیشن سے موثر انداز میں کام لیا جا سکے۔

تحریر: ٹام سمونائٹ (Tom Simonite)

Read in English

Authors

*

Top