Global Editions

ماحول دوست جوہری توانائی کے حصول کے لئے کوششوں کا آغاز

کم قیمت اور ماحولیاتی آلودگی سے پاک توانائی ذرائع کا حصول اب ایک عالمگیر ضرورت بن چکی ہے۔ حکومتی اداروں کے ساتھ ساتھ اب نجی شعبہ بھی اس میدان میں سامنے آ رہا ہے۔ اس ضمن میں اہم پیشرفت جوہری توانائی کے میدان میں ہونے کی توقع ہے جہاں کئی تحقیقی ادارے ماحول دوست، محفوظ اور کم خرچ توانائی کے حصول کے لئے کوشاں ہیں۔ اس حوالے سے ترقی یافتہ اور جدید جوہری توانائی کے پلانٹس تیار کرنے کے لئے ایک نئی کمپنی ٹیرسٹیریل انرجی (Terrestrial Energy) قائم کی گئی ہے۔ کینڈا میں قائم ہونے والی اس کمپنی نے جوہری توانائی کے شعبے میں جدید خطوط پر تحقیق کے لئے قیام کے ساتھ ہی اب تک 7 ملین امریکی ڈالرز کی فنڈنگ حاصل کر لی ہے۔ اگرچہ جوہری توانائی کے شعبہ میں تحقیق کے لئے اتنی فنڈنگ ناکافی ہے تاہم ایک نئی کمپنی کےلئے اس میدان میں تحقیق کے آغٓاز کے لئے اس فنڈنگ کو موزوں کہا جا سکتا ہے۔ امریکی تھنک ٹینک تھرڈ وے (Third Way) کی رپورٹ کے مطابق کاربن سے پاک جوہری توانائی کے حصول کے شعبے میں تحقیق کے لئے اب تک صرف شمالی امریکہ کی کمپنیوں میں 1.3 بلین ڈالرز کی نجی سرمایہ کاری ہو چکی ہے۔ ٹیرسٹیریل انرجی کی جانب سے نامعلوم سرمایہ کاروں کی جانب سے رقم کے حصول کے علاوہ ایم آئی ٹی کے دو پی ایچ ڈی حضرات نے بھی پیٹر تھیلز فائونڈرز فنڈ (Peter Thiel’s founders Funds) اور دیگر سے 6.3 ملین ڈالرز کی فنڈ ریزنگ کی ہے تاکہ وہ بھی اسی میدان میں تحقیق کا آغٓاز کر سکیں۔ کئی دیگر کمپنیاں بھی اپنی تحقیق کے لئے فنڈ ریزنگ کی کوشش کر رہی ہیں تاہم تاحال انہیں کامیابی نہیں مل سکی۔ ٹرانس اٹامک (Transatomic) کے بانی لیسلے ڈیوان (Lesile Dewan) کا کہنا کہ ٹیرسٹیریل انرجی کی جانب سے فنڈ ریزنگ میں کامیابی سب کے لئے خوشی کی خبر ہے کیونکہ اس سے اس شعبے کی بطور ایک تحقیقی شعبہ توثیق ہو گئی ہے۔ ٹیرسٹیریل انرجی کو اٹاوہ کارلیٹن یونیورسٹی کے سابق پروفیسر ڈیوڈ لیبلانس (David LeBlanc) نے قائم کی ہے۔ ڈیوڈ کو مولٹن سالٹ (Molten Salt) ری ایکٹر ٹیکنالوجی کا ماہر تسلیم کیا جاتا ہے اس ٹیکنالوجی کو 1960 کی دہائی میں آک ریج (Oak Ridge) نیشنل لیبارٹری میں ترتیب دیا گیا تھا اور اس نظریہ کے تحت مولٹن فلویڈ (Molten Fluid) یعنی (پگھلا ہوا سیال) بطور ایندھن اور سرد کار (نیو کلیئرری ایکٹر میں استعمال ہونے والا ایسا مادہ جو درجہ حرارت کو کم رکھتا ہے عموماً یہ بھاری پانی ( D2O) ہوتا ہے ۔ عام حالات میں حرارت جزب کرنے کے لیے سیال استعمال کیے جاتے ہیں) استعمال کیا جاتا ہے اور یہ پگھلائو کے عمل کو یقینی بناتا ہے۔ یہ عمل گزشتہ چھ دہائیوں سے صرف نظریہ کے طور پر ہی ہے تاہم اگر اس پر کام ہوتا ہے تو یہ بات طے ہے کہ اس کی مدد سے نہ صرف محفوظ کم خرچ بلکہ ماحول دوست جوہری ری ایکٹر تعمیر کئے جا سکتے ہیں۔ جدید جوہری توانائی کے شعبے میں حالیہ فنڈنگ وائٹ ہائوس کی جانب سے نیوکلئیر انرجی سمٹ کے بعد جاری

ہونا شروع ہوئی ہے اس اجلاس میں جوہری توانائی کے شعبے میں جدید تحقیق کی حوصلہ افزائی کے لئے معاونت اور سرمایہ فراہم کرنے کی بھی منظوری دی گئی تھی۔ ٹیرسٹیریل انرجی کے چیف ایگزیکٹو سائمن آئرش (Simon Irish) کا کہنا تھا کہ ہمارا ارادہ ہے کہ ہم سال 2020ء تک پہلا جوہری پاور پلانٹ فروخت کے لئے پیش کر دیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ماحولیاتی آلودگی کا ٓخاتمہ نہایت ضروری ہے اور ہم اس کے لئے ایک اور دہائی کا انتظار نہیں کر سکتے لہذا ہمیں جوہری توانائی کے شعبے پر آج ہی سے کام شروع کرنا چاہیے۔

تحریر: رچرڈ مارٹن (Richard Martin)

Read in English

Authors

*

Top