Global Editions

فیس بک کاٹرانسلیشن کیلئے مصنوعی ذہانت کی ٹیکنالوجی کا استعمال

فیس بک پر اب آپ وہ پیغامات بھی آسانی سے سمجھ سکتے ہیں جو ان زبانوں میں بھیجے جاتے ہیں جو آپکے لئے ناآشنا ہیں۔ اگرچہ فیس بک کی ٹرانسلیشن سروس کافی عرصے سے کام کر رہی ہے لیکن اب صارفین کی سہولت کے لئے فیس بک انتظامیہ نے اس سروس کو اپ گریڈ کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور اس مقصد کے لئے فیس بک انتظامیہ مصنوعی ذہانت کی مدد لیتے ہوئے ایک نیورل نیٹ ورک قائم کرنے کا ارادہ رکھتی ہے جو اس سال کے آخر تک کام شروع کر دیگا۔ فیس بک اس مقصد کے لئے مشینی آموزش کا سہارا لے گی اور اس کے لئے فیس بک مصنوعی ذہانت کی ٹیکنالوجی کی تیاری پر کثیر سرمایہ خرچ کر رہی ہے۔ فیس بک کی لینگوئج ٹیکنالوجی ٹیم کے ڈائریکٹر آف انجینئرنگ کے ڈائریکٹر ایلن پیکر (Alan Packer) نے بتایا ہے کہ فیس بک کی جانب سے تیار کیا جانیوالا مصنوعی ذہانت کا شاہکار نیورل نیٹ ورک اس وقت موجود تمام ٹرانسلیشن سافٹ وئیر سے بہتر ہو گا اور صارفین کو بھیجے جانیوالے پیغامات کا مافی الضمیر سمجھنے میں آسانی پیدا کریگا۔ وہ ایم آئی ٹی ٹیکنالوجی ریویو کے زیر اہتمام سان فرانسسکو میں منعقد ہونے والی ایم ٹیک کانفرنس کے موقع پر اظہار خیال کر رہے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ فیس بک کی جانب سے کی جانیوالی حالیہ کاوش سے نہ صرف پیغامات کا ترجمعہ ہو سکے گا بلکہ مقامی زبانوں میں بھیجے جانیوالی ضرب المثلوں کا بھی ترجمعہ کیا جا سکے گا تاکہ صارفین حقیقی معنوں میں ان پیغامات سے لطف اندوز ہو سکیں۔ معروف انٹرنیٹ کمپنی گوگل بھی اسی طرح کے نیورل نیٹ ورک پر کام کر رہی ہے تاہم ابھی تک یہ واضح نہیں کہ گوگل کب تک اس نیورل نیٹ ورک کے ذریعے ترجمے کی سہولت صارفین کو فراہم کر سکے گی۔ فیس بک اور گوگل دونوں کمپنیوں کے پاس صارفین کی ایک بہت بڑی تعداد موجود ہے ان دونوں نیٹ ورکس پر مقامی زبانوں کے استعمال کنندگان کی تعداد بھی بہت زیادہ ہے لہذا ان کے پاس ان تمام الفاظ کا ایک بہت بڑا ذخیرہ موجود ہے جسے وہ اس مجوزہ نیورل نیٹ ورک کے ذریعے استعمال کر سکتے ہیں، تاہم فیس بک کو اس معاملے پر گوگل پر سبقت حاصل ہے کیونکہ وہ اپنے صارفین کے ذریعہ ابلاغ سے زیادہ بہتر انداز میں آگاہ ہے۔ پیکر کا کہنا تھا کہ فیس بک اس وقت چالیس مقامی زبانوں کا ترجمعہ کر رہا ہے اور روزانہ کی بنیاد پر اس ترجمعے کی تعداد تقریباً دو ارب الفاظ بنتی ہے۔ اسی طرح 800 ملین افراد ماہانہ کی بنیاد پر فیس بک کی ٹرانسلیشن سروس سے مستفید ہوتے ہیں۔ فیس بک کی جانب سے حالیہ اقدامات سے صارفین کس حد تک لطف اندوز ہو سکیں اس کا جواب تو فیس بک کی جانب سے نیورل نیٹ ورک کے آپریشنل ہونے پر ہی مل سکتا ہے تاہم یہ کہا جا سکتاہے کہ ٹیکنالوجی میں ہونے والی روزبروز ترقی سے ایسا ہونا ناممکن بھی نہیں۔

تحریر: ریچل میٹز (Rachel Metz)

Read in English

Authors

*

Top