Global Editions

فالج کے علاج کے لئے نئی ڈیوائس تیار

ڈیفینس ایڈوانس ریسرچ پراجیکٹس ایجنسی (DARPA) نے فالج کے علاج کے لئے ایک نئی نہایت محفوظ اور قابل اعتماد ڈیوائس تیار کی ہے۔ اس ڈیوائس کو سٹینٹ روڈ ( Stentrode ) کا نام دیا گیا ہے۔ یہ سٹنٹ کی طرح کی ایک ڈیوائس ہے جو محفوظ اور قابل اعتماد انداز میں دماغی خلیوں کی کارکردگی کے حوالے سے معلومات حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ اعلی کارکردگی کے حامل مصنوعی اعضاء کو کنٹرول کرتی ہے جس سے فالج کے مریض حرکت کرنے کی کھوئی ہوئی صلاحیت دوبارہ حاصل کر سکتے ہیں۔ اس ڈیوائس کو آسٹریلیا کی یونیورسٹی آف میلبورن کے تحقیق کاروں نے ایجاد کیا ہے اور اسے فالج کے مرض کے علاج کی سمت میں ایک اہم قدم کے طور پر مانا جا رہا ہے۔ ؎سٹنٹ کی طرح کا یہ آلہ الیکٹروڈ کی ترتیب وار صف بندی پر مشتمل ہوتا ہے جسے سرجیکل تکینک کی مدد سے تیار کیا گیا ہے اور اسے روایتی طریقہ کے تحت آپریشن کے زریعے کھوپڑی کو کھول کر دماغ کے اندر نہیں رکھا جاتا بلکہ خون کی شریانوں کی مدد سے اس آلے کو جسم میں داخل کیا جاتا ہے۔ اس ڈیوائس کا حجم ایک پیپر کلپ جتنا ہے اور اسے گردن میں موجود خون کی شریانوں میں داخل کیا جاتا ہے۔ اس آلے کے ابتدائی تجربات بھیڑوں پر کئے گئے۔ تحقیق کاروں کے مطابق ان تجربات کے نہایت حوصلہ افزا تنائج سامنے آئے ہیں اور اس کے تحت حرکت کی صلاحیت سے محروم بھیڑ ایک سو نوے دن تک آزادی سے حرکت کرتی رہی۔ تحقیق کاروں کے مطابق فالج کے مریضوں کے علاج کے لئے یہ ایک قابل عمل طریقہ کار ہے۔ تحقیق کار اب آئندہ برس ملیبورن کے ہسپتال میں اس ڈیوائس کے انسانوں پر تجربات کا آغاز کرینگے۔

تحریر: مائیک اوورکٹ (Mike Orcutt)

Read in English

Authors

*

Top