Global Editions

جین تھراپی سے علاج ۔۔۔ پیسے واپس کرنے کی گارنٹی کے ساتھ

جین تھراپی کے ذریعے علاج کو یورپ میں متعارف کرا دیا گیا ہے اور اس طریقہ سے علاج کی سہولت فراہم کرنے والی کمپنی Glaxo Smith Kline نے دعویٰ کیا ہے کہ اگر ان کی تجویز کردہ تھراپی سے مریض صحت یاب نہ ہوا تو علاج پر اٹھنے والے تمام اخراجات واپس کر دئیے جائیں گے اس طرح جین تھراپی کےذریعے علاج دنیا کا ایسا پہلا طریقہ علاج ہے جس میں منی بیک گارنٹی بھی دی گئی ہے۔ اس طریقہ علاج کو Strimvelis کا نام دیا گیا ہے اور اس کی مدد سے کئی طرح کے امراض کا علاج جین تھراپی کے ذریعے کیا جائیگا۔ اس طریقہ علاج سے مستفید ہونے کے لئے مریض کو 594000 یوروز یعنی 665000 ڈالرز کے اخراجات برادشت کرنا ہونگے اور یہ علاج کےلئے بہت زیادہ اخراجات ہیں۔ ان اخراجات کے پیش نظر ہی کمپنی GSK نے مریض کے صحت یاب نہ ہونے کی صورت میں علاج پر اٹھنے والے تمام اخراجات واپس کرنے کی گارنٹی دی ہے یعنی مریضوں کو جین تھراپی کے ذریعے علاج کی جانب راغب کیا گیا ہے۔ اس حوالے اٹلی کی میڈیسن ایجنسی کی ڈائریکٹر جنرل لیکوا پینی (Luca Pani) کا کہنا ہے کہ علاج کے لئے اخراجات کے تعین کے لئے برطانوی کمپنی سے مذاکرات کئے گئے اور انہیں یہ کہا گیا کہ جین تھراپی کے لئے جس طرح وہ کہہ رہے ہیں اس پر عمل نہ ہوا یعنی مریض صحت یاب نہ ہوا تو مریض تھراپی کے اخراجات ادا نہیں کریگا یا ادا شدہ رقم واپس وصول کریگا جس پر برطانوی دوا ساز ادارے GSK نے آمادگی ظاہر کی۔ اس طریقہ علاج کے تحت مریض بچے کے بون میرو میں مسنگ جین کا وائرس داخل کیا جاتا ہے ۔ جس سے مریض میں انفیکشن سے لڑنے کی صلاحیت پیدا ہوتی ہے۔ اس حوالے سے اٹلی کے شہر میلان میں اٹھارہ بچوں پر تجربات کئے گئے پندرہ بچوں میں نمایاں بہتری کے آثار ہیں جبکہ تین مکمل طور پر صحت یاب ہو چکے ہیں۔ برطانوی دوا ساز ادارے GSK نے سال 2010 ءمیں اس طریقہء علاج کے حقوق حاصل کر لئے تھے اور اسے یورپ میں اس طریقہ علاج کو شروع کرنے کا اجازت نامہ گزشتہ برس حاصل ہوا تھا تاہم مختلف پیچیدگیوں کے سبب ابھی جین تھراپی کے ذریعے علاج صرف اٹلی میں ہی کیا جا رہا ہے اور یہ کہا جا سکتا ہے کہ اٹلی میں علاج کے لئے طے ہونے والے اخراجات پورے یورپ کے لئے ہی ہونگے۔ پینی کا کہنا ہے کہ جین تھراپی کے لئے اٹھنے والے اخراجات اقساط میں بھی ادا کئے جا سکتے ہیں۔ جین تھراپی کے عمل کے ذریعے متاثرہ جین کو درست کر دیا جاتا ہے اور اس طرح مریض زندگی بھر دوبارہ اس مرض میں مبتلا نہیں ہوتا۔ اسی طرح آئندہ سال تک آنکھ کی بیماری Hemophilia اور دماغی امراض کا علاج بھی متعارف کرایا جائیگا اور وہ اتنا ہی مہنگا ہو سکتا ہے۔

تحریر: انٹونیو ریگالڈو (Antonio Regalado)

Read in English

Authors

*

Top