Global Editions

بڑھتی عمر اب پریشانی کی بات نہیں

انسان خصوصاً خواتین بڑھتی عمر سے پریشان رہتی ہیں اور عمر چھپانے کے لئے خاصے جتن کرتی ہیں مگر اب بڑھتی عمر کے شکار خواتین و حضرات کے لئے اچھی اطلاع سامنے آئی ہے کہ تحقیق کار ایسی دوا پر کام کر رہے ہیں جس سے بڑھتی عمر کے پراسیس میں کمی لائی جا سکتی ہے عمر کے بڑھنے کو روکا نہیں جا سکتا تاہم اس کی رفتار کو کم ضرور کیا جا سکتا ہے۔ سیاٹل میں تحقیق کاروں نے جانوروں پر ابتدائی تجربات کئے ہیں اور ان تجربات کے نتائج بھی کافی حوصلہ افزا آئے ہیں۔ تحقیق کاروں نے 20 پالتو کتوں پر رپامائی سن (Rapamycin) نامی دوا کے تجربات کئے ہیں یہ دوا کس طرح کام کرتی ہے یہ تو معلوم نہیں ہو سکا تاہم یہ عمر کے دورائنے کو بڑھانے میں ضرور مددگار ثابت ہو رہی ہے۔ تحقیق کاروں کے مطابق اس لیبارٹری میں اس دوا کے تجربات انوع اقسام کے رینگنے والے جانوروں جیسے سانپ، کینچوے اور چوہے شامل ہیں پر کئے گئے اور ان کے نتائج بھی حوصلہ افزا آئے ہیں اور اگر کتوں پر یہ تجربات کامیاب ہو جاتے ہیں تو اس دوا کے انسانوں پر تجربات شروع کئے جائیں گے۔ درحقیقت Rapamycin ایسی دوا ہے جس پر آنے والے برسوں میں مزید تحقیق ہو گی کیونکہ وقت کے ساتھ ساتھ تحقیق کار عمر بڑھنے کے عوامل سے آگاہ ہوتے چلے جائیں گے۔

اس دوا کے ابھی چند بعد از استعمال نقصانات سامنے آئے ہیں جن میں خون میں شوگر کی مقدار بڑھنا شامل ہے اور یہ دوا ذیابیطس کا سبب بن سکتی ہے۔ اس دوا سے منہ میں چھالے بھی پڑ سکتے ہیں۔ تحقیق کار اس امر پر متفکر ہیں کہ اس دوا کے استعمال سے ممکنہ انفکیشن کا تدارک کیسے کیا جائے کیونکہ یہ دوا اعضا کی پیوند کاری کے جراحی عمل میں بھی استعمال ہوتی ہے۔ تحقیق کار ابھی یہ سمجھنے سے قاصر ہے کہ Rapamycin کئی مریضوں میں مدافعتی نظام کو قوت بخشنے کا سبب بنتی ہے تو کئی مریضوں مین مدافعتی نظام کو کمزور کر دیتی ہے۔ ہارورڈ میڈیکل سکول کے تحقیق کار ڈیوڈ سن کلئیر (David Sinclar) کا کہنا ہے کہ عمر کی رفتار کم کرنے کا خیال ایسا شعبدہ ہے جیسے رفتار سے چلنے والی گاڑی کی قوت بتدریج کم ہو جائے اور اسے چلانے کے لئے کوئی اور طریقہ کار اختیار کیا جائے۔ یونیورسٹی آف ایلینوائے میں پبلک ہیلتھ کے شعبے کے پروفیسر ایس جے اولسنکی (S. Jay Olshansky) کا کہنا ہے کہ مارکیٹ میں بڑھتی عمر کو روکنے کے لئے کئی ادویات موجود ہیں مگر یہ کسی سائنسی تحقیق کے بغیر ہیں، Rapamycin ایسی دوا ہے جسے حقیقی سائنس دانوں نے تیار کیا ہے۔ Rapamycin نامی دوا ایک زمینی بیکٹریا سے تیار کی گئی ہے جسے مشرقی جزیرے راپا نوئی Rapa Nui سے حاصل کیا گیا ہے اور یہ دوا چوہوں کی عمر میں نو سے چودہ فیصد اضافے کا باعث بنی ہے۔

تحریر: فائے فلام Faye Flam

Read in English

Authors
Top